اوباما نے مصر کو ایف 16 طیاروں کی فراہمی کی اجازت دے دی

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

امریکی صدر براک اوباما نے مصر میں محمد مرسی کی حکومت کو معزول کئے جانے کے بعد مصر کو ایک درجن ایف 16 طیاروں کی منتقلی کو روکے جانے کا حکم معطل کرتے ہوئے یہ طیارے قاہرہ کے حوالے کرنے کا فیصلہ کیا ہے۔

وائٹ ہائوس کے مطابق اوباما نے مصری صدر عبدالفتاح السیسی کو فون پر بتایا ہے کہ 2013ء میں منجمد کی گئی اس فوجی ڈیل کو دوبارہ بحال کردیا گیا ہے۔

امریکا کی جانب سے یہ اقدام اس وقت سامنے آیا ہے کہ جب مصر یمن میں حوثی باغیوں کے خلاف سعودی عرب کی سربراہی میں اہم کردار ادا کررہا ہے اور ساتھ ہی لیبیا میں دولت اسلامیہ عراق و شام [داعش] کے خلاف کارروائیاں کررہا ہے۔

امریکی نیشنل سیکیورٹی کونسل کی ترجمان برناڈیٹ میہان کا کہنا تھا " اس فیصلے سے امریکا اور مصر کے فوجی امداد کے تعلق کے قیام میں مدد ملے گی جس سے 21 ویں صدی میں سیکیورٹی مشکلات کا مقابلہ کرنے میں مدد ملے گی۔

اعلیٰ ترین ٹیکنالوجی سے لیس ان جہازوں کے علاوہ اوباما نے مصر کو 20 ہارپون میزائل اور 125 ایم1 اے1 ابرامس ٹینک کٹیں بھی دینے پر اتفاق کیا ہے۔

واشنگٹن ہر سال مصر کو 1٫5 ارب ڈالر کی امداد دیتا ہے جس میں سے 1٫3 ارب ڈالر امداد فوجی نوعیت کی ہوتی ہے۔ مرسی حکومت کی معزولی کے بعد تقریبا 650 ملین ڈالر کی فوجی امداد روک لی گئی تھی۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں