حوثی مخالف کارروائیوں میں تعطل کے لئے سیکیورٹی کونسل کا اجلاس

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size

اقوام متحدہ کی سیکیورٹی کونسل ہفتے کے روز روس کی جانب سے یمن میں سعودی سربراہی میں ہونے والے فضائی آپریشن میں انسانی بنیادون پر تعطل پر غور کرنے کے لئے اجلاس کا انعقاد کرے گی۔

روس نے یمن میں جاری لڑائی کے دوران شہریوں کی ہلاکتوں کی بڑھتی ہوئی تعداد پر خدشات کے پیش نظر 15 ممبران پر مشتمل کونسل کا اجلاس طلب کرنے کا مطالبہ کیا تھا۔

اقوام متحدہ کے روس میں مشن کے ترجمان الیکسی زایتسیف کا کہنا تھا کہ بند کمرے کے اجلاس میں فضائی حملوں کے تعطل پر بات چیت کی جائے گی۔

روس کی جانب سے فضائی حملے روکنے کا یہ مطالبہ اس وقت سامنے آیا ہے کہ جب خلیجی ممالک حوثی باغیوں کو اسلحے کی فراہمی پر پابندی اور ان پر پابندیوں کے لئے اقوام متحدہ کی قرارداد لانے پر زور ڈال رہے ہیں۔

مگر اس قرارداد کے ڈرافت کو روس کی شدید مخالف کا سامنا کرنا پڑ رہا ہے جس نے پورے ملک میں اسلحے کی فراہمی پر پابندی لگائی جانے اور محدود پابندیوں کا مطالبہ کیا ہے۔

جمعرات کے روز اقوام متحدہ کی امدادی کارروائیوں کی سربراہ ویلری اموس نے کہا تھا کہ انہیں امدادی ایجنسیوں کی جانب سے 519 افراد کے ہلاک ہونے کی خبر کے بعد جنگ میں پھنسے ہوئے شہریوں کی حالت کے بارے میں شدید خدشات ہیں۔

اقوام متحدہ کی بچوں کی ایجنسی کے مطابق کم ازکم 62 بچے ہلاک ہوچکے ہیں جبکہ 30 سے زائد زخمی ہیں اور مزید بچوں کو ملیشیائوں میں شامل کیا جارہا ہے۔

مقبول خبریں اہم خبریں