'ایران فوجی تنصیبات کے معائنے کی اجازت نہیں دے گا'

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size

ایرانی مسلح افواج کے چیف آف سٹاف کا کہنا ہے کہ ایران عالمی طاقتوں کے ساتھ کسی ممکنہ جوہری معاہدے کی صورت میں اپنی فوجی تنصیبات کی انسپیکشن کی اجازت نہیں دے گا۔

میجر جنرل حسن فیروز عبادی نے ایران کی سرکاری نیوز ایجنسی فارس سے بات کرتے ہوئے کہا "ایران کی مسلح افواج کسی کو بھی ایران کی فوجی تنصیبات میں داخل ہونے کی اجازت نہیں دیں گی۔"

فیروز عبادی کی جانب سے یہ بیان عالمی طاقتوں اور ایران کے درمیان ایک فریم ورک معاہدے کی تشکیل کے بعد سامنے آیا ہے۔ معاہدے کے امریکا کی جانب سے جاری حقائق میں دکھایا گیا تھا کہ انٹرنیشنل اٹامک انرجی کمیشن کو ایران کی تمام جوہری سرگرمیوں تک رسائی حاصل ہوگی۔

اس سے پہلے جمعرات کے روز ایرانی سپریم لیڈر آیت اللہ علی خامنہ ای نے ایران کی جوہری سرگرمیوں پر کسی غیر معمولی نگرانی کے اقدامات کے امکان کو رد کرتے ہوئے کہا کہ فوجی تنصیبات کی تلاشی نہیں لی جاسکتی ہے۔

پچھلے ہفتے کے دوران عالمی طاقتوں اور تہران کے درمیان مذاکرات میں اس بات پر آمادگی ظاہر کی گئی تھی کہ اقوام متحدہ کے انسپکٹرز کو ایران میں جوہری سرگرمیوں کی تمام جگہوں کی رسائی حاصل ہوگی۔

مگر اس رسائی کی تفصیلات کو مذاکرات کی فائنل سٹیج پر چھوڑ دیا گیا ہے جو کہ 30 جون تک مکمل کرلی جائے گی۔

مقبول خبریں اہم خبریں