.

مکہ: خاتون کو تھپڑ مارنے کی وڈیو، ایک شخص گرفتار

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

مکہ پولیس کے ترجمان کے مطابق ایک خاتون کو تھپڑ مارنے کی وڈیو منظرعام پر آنے کے بعد ایک مشتبہ شخص کو حراست میں لے لیا گیا ہے۔

ترجمان لیفٹیننٹ جنرل عطی القریشی نے بتایا ہے کہ تفتیش کاروں نے پچاس سالہ سعودی شخص کو حراست میں لے کر اس سے تفتیش شروع کردی ہے جب کہ وڈیو میں تشدد کا نشانہ بننے والی خاتون سے بھی پوچھ گچھ کی جارہی ہے۔

یہ دونوں شہری جدہ کے علاقے بلد میں ایک دکان پر کام کرتے تھے اور وہیں ان کا کسی بات پر جھگڑا ہوگیا جس کے بعد نوبت ہاتھا پائی تک جاپہنچی جس کی ویڈیو بنائی گئی۔

یہ وڈیو سوشل میڈیا پر اپ لوڈ کردی گئی جس کے نتیجے میں شدید عوامی ردعمل سامنے آیا ہے۔ وڈیو میں خاتون زمین پر گرجاتی ہے اور تھپڑ مارنے والے شخص کو برا بھلا کہتی ہے مگر اس موقع پر موجود کوئی بھی شخص اس کی مدد کے لیے آگے نہیں آتا ہے۔

وڈیو پر ردعمل میں جنرل ایڈمنسٹریشن انسٹی ٹیوٹ میں لیکچرر عبدالرحمان النبان نے خاتون کے ساتھ ہمدردی کا مظاہرہ کرتے ہوئے کہا کہ تشدد کرنے والے شخص کا رویہ مردانہ اقدار کے مطابق نہیں تھا۔

سوشل میڈیا پر ایک صارف احمد الکثیر نے وڈیو میں نظر آنے والے مجمع کو خاتون کی مدد نہ کرنے پر شدید تنقید کا نشانہ بنایا ہے۔ ان کا کہنا تھا "موقع پر موجود مردوں کو خاتون پر ہاتھ اٹھانے والے کو مارنا چاہئیے تھا۔"

مکہ کے گورنر شہزادہ خالد الفیصل نے واقعہ کا نوٹس لیتے ہوئے پولیس کو اس وکی شفاف تفتیش کرنے اور انھیں پیش رفت سے آگاہ رکھنے کا حکم دیا ہے۔