.

ایرانی طیارے کی یمن میں نو فلائی زون کی خلاف ورزی

صنعا ائرپورٹ پر اتحادی طیاروں کی بمباری سے رن وے ناقابل استعمال ہو گیا

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

ایران کا ایک طیارہ نو فلائی زون کی خلاف ورزی کرتے ہوئے یمن کی فضائی حدود میں داخل ہو گیا ہے لیکن سعودی عرب کی قیادت میں اتحادی ممالک کے لڑاکا طیاروں نے صنعا کے بین الاقوامی ہوائی اڈے کے رن وے پر بمباری کی ہے۔

ایرانی طیارہ اومان کی جانب سے اتحادی ممالک کے قائم کردہ نو فلائی زون کی خلاف ورزی کرتے ہوئے یمن کی فضائی حدود میں داخل ہوا تھا۔ سعودی عرب کی قیادت میں اتحادی ممالک کی فضائیہ نے 26 مارچ کو یمن میں حوثی باغیوں کے خلاف آپریشن فیصلہ کن طوفان کے آغاز کے فوری بعد نوفلائی زون قائم کر دیا تھا۔

سعودی وزارت دفاع کے ترجمان بریگیڈئیر جنرل احمد العسیری نے صحافیوں کو بتایا ہے کہ ایرانی طیارہ مقررہ وقت کے علاوہ یمن کی فضائی حدود میں داخل ہوا تھا۔ انھوں نے کہا کہ یمن کے حوالے سے ایرانی اقدامات غیر ذمے دارانہ ہیں اور نو فلائی زون کی خلاف ورزی کے ذریعے یمنیوں کے مفادات کی کوئی خدمت نہیں ہوگی۔

انھوں نے کہا کہ وہ نہیں جانتے کہ ایرانی طیارے نے اتحاد کی سعودی عرب کے بیشا ہوائی اڈے پر معائنے کے لیے رکنے کی ہدایات کی خلاف ورزی کیوں کی ہے اور اس نے براہ راست صنعا کے ہوائی اڈے پر اترنے کی کوشش کی ہے۔

سعودی ترجمان نے مزید کہا کہ ''ہم متعدد مرتبہ یہ کہہ چکے ہیں کہ انسانی امدادی سرگرمیاں اتحاد کے ساتھ رابطے کے ذریعے انجام دی جائیں۔ اب رن وے پر بمباری کی گئی ہے اور اس کی مرمت میں وقت لگے گا۔ اس کی تمام ذمے داری ایران پر عاید ہوتی ہے کیونکہ ہم نے اس کو متعدد مرتبہ انتباہ کیا تھا''۔