.

سوانحی خاکہ: نائب ولی عہد شہزادہ محمد بن سلمان بن عبدالعزیز

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

سعودی عرب کے فرمانروا شاہ سلمان بن عبدالعزیز نے 10 رجب 1436ھ بمطابق 28 اپریل 2015ء کو اپنے نئے شاہی فرمان کے تحت مملکت کے اعلیٰ عہدوں میں غیرمعمولی تبدیلی کی ہے۔ نئے فرمان کے تحت شہزاد مقرن بن عبدالعزیز کو ولی عہد کےعہدے سے ہٹا کر شہزادہ محمد بن نایف کو علی عہد اور اپنے بیٹے شہزادہ محمد بن سلمان کو نائب ولی عہد مقررکیا ہے۔ شہزادہ محمد بن سلمان بن عبدالعزیز نائب ولی عہد کے ساتھ نائب وزیراعظم، وزیردفاع اور اقتصادی ترقی کونسل کے چیئرمین کے عہدوں پربھی خدمات انجام دیں گے۔

شہزادہ محمد بن عبدالعزیز ریاض کی شاہ سعود یونیورسٹی کے گریجویٹ ہیں جو اسپیشل سیکٹر اور پبلک سیکٹر دونوں شعبوں میں گہری مہارت رکھتے ہیں۔

تعلیم

وزیردفاع شہزادہ محمد بن سلمان نے دارالحکومت ریاض کے اسکول سے ابتدائی تعلیم حاصل کی۔ ان کا شمار اسکول میں سعودی عرب بھرمیں ٹاپ 10 پوزیشنیں حاصل کرنے والے طلباء میں رہا۔ دوران تعلیم انہوں‌نے مختلف پروگرامات کے اضافی کورسز بھی کئے اور قانون میں گریجویشن کی ڈگری حاصل کی۔ جامعہ الریاض کے لاء کالج میں گریجوایشن میں قانون اور سیاسیات میں ان کی دوسری پوزیشن تھی۔

عملی زندگی اور پیشہ وارانہ تجربہ

• شہزادہ محمد نے تعلیم سے فراغت کے بعد ابتدائی سرگرمیاں سرکاری محکمے کے بجائے آزادانہ طورپر جاری رکھیں۔ دس سال تک انہوں نے خود سے کئی فلاحی اور خیراتی کاموں میں حصہ لیا اور اس میدان میں انعامات اور ایوارڈز حاصل کیے۔

• نجی شعبے میں کامیابیوں کے جھنڈے گاڑنے کے بعد شہزادہ محمد نے سرکاری محکموں میں بھی طبع آزمائی کی۔10 اپریل 2007ء کو شاہی فرمان کے تحت انہیں سعودی کابینہ میں ماہرین کونسل کا مشیر مقرر کیا گیا۔ انہوں‌نے 16 دسمبر2009ء تک اس عہدے پر کام کیا۔ سولہ دسمبر دو ہزار نو کو انہیں شاہی فرمان کے تحت امیر ریاض کا خصوصی مشیر مقرر کردیا گیا۔ تین مارچ 2013ء انہوں‌ نے ریاض کے مسابقتی مرکز کے سیکرٹری جنرل کے عہدے کی ذمہ داریاں سنھبالیں اور ساتھ ہی ساتھ شاہ عبدالعزیز سرکریو ٹ بورڈ کے رکن اور ڈیفنس ڈویلپمپٹ سپریم کمیٹی کے بھی ممبر رہے۔

•شہزادہ محمد بن سلمان کو شاہ سلمان کا اس وقت مشیر مقرر کیا گیا جب وہ امیر ریاض کے عہدے پرتعینات تھے۔ ولی عہد کے دفتر کے انچارج اور ان کے پرنسپل سیکرٹری کے طورپربھی خدمات انجام دیں۔ تین مارچ 2013ءکو شاہی فرمان کے تحت انہیں ولی عہد کے شاہی دیوان کا منتظم مقرر کیا گیا اورانہیں ایک وزیر کے برابر رتبہ دے دیا گیا۔

•13 جولائی 2013ء کو انہیں وزیردفاع کے دفتر کا سپروائزرمقرر کیا گیا۔ 25 اپریل 2014ء کو شاہی فرمان کے تحت انہیں وزیر مملکت، پارلیمنٹ کارکن 18 ستمبر 2014ء کو شاہ عبدالعزیز بورڈ کی ایگزیکٹو کمیٹی کے چیئرمین کا اضافی چارج بھی سونپا گیا۔

• 23 جنوری 2015ء کو شاہی فرمان کے تحت شہزادہ محمد بن سلمان بن عبدالعزیز کو خادم الحرمین الشریفین کا مشیر خاص اور شاہی دیوان کا منتظم اعلیٰ مقرر کیا گیا۔

فلاحی خدمات میں والد کے نقش قدم پر

• شہزادہ سلمان بن عبدالعزیز اپنے والد شاہ سلمان بن عبدالعزیز آل سعود کی طرح سماجی بہبود اور فلاح انسانیت کے کاموں میں بھی گہری دلچسپی رکھتے ہیں۔ جس طرح ان کے والد شاہ سلمان نے اپنے نام سے ایک فلاحی تنظیم کی۔ اسی طرح شہزادہ محمد نے بھی اپنے نام سے ایک فلاحی اور خیراتی ادارہ قائم کیا جسے مخفف کےطورپر"مسک الخیریہ" کا نام دیا گیا ہے۔ شہزادہ محمد خود ہی اس تنظیم کے چیئرمین ہیں۔ یہ ادارہ سعودی عرب میں نوجوانوں کو علوم و فنون، ثقافت، سماج اور ٹیکنیکل شعبے میں معاونت کرتی ہے۔
• شہزادہ محمد بن سلمان نے اپنی تنظیم کے علاوہ بھی فلاحی سرگرمیاں جاری رکھیں اور اس ضمن میں متعدد حکومتی ذمہ داریاں بھی احسن طریقے سے ادا کرتے رہے۔ اب بھی ان کے کندھوں پر سرکاری سطح پر فلاحی ذمہ داریوں کا بوجھ ہے۔

• شہزادہ محمد شاہ سلمان بن عبدالعزیز یوتھ سینٹر کے چیئرمین بورڈ آف ڈائریکٹر ہیں۔ یہ ادارہ ان کے والد شاہ سلمان بن عبدالعزیز نے نوجوانوں کی ترقی کے لیے قائم کیا ہے۔
• اس کے علاوہ شہزادہ محمد شاہ سلمان آباد کاری فائونڈیشن کے ڈپٹی ڈائریکٹر اور تنظیم کی ایگزیکٹو کمیٹی کے سپروائزرہیں۔ یہ تنظیم ماہرین تعلیم، علم سماجیات کے علماء کے تعاون سے تشکیل دی گئی ہے جس کا مقصد کم آمدنی والے شہریوں کی ضروریات کا خیال رکھنا ہے۔
• ریاض مدارس کونسل کے چیئرمین۔۔۔ غیر منافع بخش اسکول

• چیئرمین ایگزیکٹو کمیٹی برائے شاہ عبدالعزیز سرکریوٹ بورڈ

اس سے قبل شہزادہ محمد درج ذیل خدمات انجام دے چکے ہیں

• ابن باز فائونڈیشن کے بورڈ آف ٹرسٹیز کے ممبر
• ریاض میں امدادی اداروں کی رابطہ کمیٹی کے رکن
•ریاض میں تحفیظ القرآن فائونڈیشن کی مرکزی کونسل کے رکن

• البر فائونڈیشن کی مجلس منتظمہ کے رکن
•السعودیہ آرگنائزیشن کے اعزازی صدر
• نیشنل چیرٹی فائونڈیشن برائے انسداد منشیات کے اعزازی رکن

•خاندان کی کفالت اور رشتہ ازدواج میں سہولیات فراہم کرنے والی تنظیم ابن باز فائونڈیشن کے بانی رکن۔

انعامات اور میڈل

شہزادہ محمد بن سلمان بن عبدالعزیز فلاحی خدمات کے اعتراف میں اب تک متعدد انعامات اور میڈل وصول کرچکے ہیں۔ سال 2013ء کی فلاحی شخصیت کا ایوارڈ کاروبار میں مدد فراہم کرنے اور نوجوانوں کی ترقی کے لیے خدمات کے صلے میں انہیں دیا گیا۔ یہ ایوارڈ بزنس جریدے "فوربز" کے مشرق وسطیٰ کے ایڈیشن کی جانب سے ہرسال جاری کیا جاتا ہے۔