ایران پر ایتھوپیا میں مصرکے خلاف سازش کا الزام

درجنوں مصری تنظیموں کا ایرانی مداخلت پرانتباہ

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

مصر میں 32 مختلف سیاسی جماعتوں اور 41 سماجی گروپوں نے ایتھوپیا میں مصر مخالف ایرانی سرگرمیوں پر گہری تشویش کا اظہار کرتے ہوئے خبردار کیا ہے کہ ایران، ایتھوپیا اور مصر کے درمیان طے پائے معاہدوں کو ناکام بنانے کی سازشیں کررہا ہے۔

مصر کی درجنوں سیاسی اور سماجی تنظیموں کے نمائندہ اتحاد ’’ الاستقلال‘‘ کے چیئرمین احمد الفضالی نے العربیہ ڈاٹ نیٹ سے گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ ایتھوپیا میں ایرانی سرگرمیاں مصر کی قومی سلامتی کے لیے سنگین خطرہ ہیں۔ حال ہی میں یہ اطلاعات بھی منظرعام پر آئی ہیں کہ ایران ایتھوپیا اورمصر کے درمیان تعلقات بگاڑنے کی سازشیں کررہا ہے۔ انہوں نے کہا کہ مصری انٹیلی جنس اداروں کو معلوم ہوا ہے کہ تہران ایتھوپیا میں سرمایہ کاری کی آڑ میں نہ صرف مداخلت کی کوشش کررہا ہے بلکہ مصر اور ایتھوپیا کے درمیان تعلقات کو بگاڑنے کی سازشوں میں سرگرم ہے۔ اگر ایران اپنی سازشوں میں کامیاب رہتا ہے تو مصر کی آبی سیکیورٹی کو ناقابل تلافی نقصان پہنچ سکتا ہے۔ ایتھوپیا میں ایران کا بڑھتا اثر ونفوذ خطے کے دیگر عرب ممالک کے ساتھ تعلقات پر بھی اثر انداز ہوسکتا ہے۔

الفضالی کا کہنا تھا کہ افریقی ملکوں کی تعمیر وترقی میں مص کا کلیدی کردار رہا ہےلیکن اب ایران ایک سازش کے تحت افریقا میں اپنا اثر روسوخ بڑھا کر عرب ممالک بالخصوص مصر کا کردار محدود کرنے کے لیے کوشاں ہے۔ افریقی ممالک میں ایران کی بالادستی اور اجارہ داری عرب ملکوں بالخصوص مصر کے افریقا میں مفادات کو نقصان پہنچا سکتا ہے۔

مصری سیاست دان نے ایتھوپیا میں ایرانی سرگرمیوں پر ایک ایسے وقت میں انتباہ کیا ہے جب مصری وزیرخارجہ سامح شکری اپنے خصوصی دورے پر سوڈان اور اریٹیریا روانہ ہو رہے ہیں۔ مبصرین کے خیال میں مصری وزیرخارجہ کا افریقی ممالک کا دورہ ایران کی خطے میں بڑھتی سرگرمیوں کے تناظر میں ہوسکتا ہے۔ وزیرخارجہ سوڈان اور اریٹیریا کے دورے کے دوران ان ملکوں کی قیادت سے ایران کی مداخلت پر بات کرسکتے ہیں۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں