.

سعودی سیاح کی میزبانی نہ کرنے پر مصری ہوٹل بند

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

مصر اور سعودی عرب کے درمیان گہرے دوستانہ تعلقات کسی سے ڈھکی چھپی بات نہیں مگر مصری محکمہ سیاحت کی تاریخ میں ایک انوکھا واقعہ پیش آیا ہے کہ مصری ہوٹل کے مالک کو سعودی عرب کے ایک شہری کی میزبانی نہ کرنے کی پاداش میں ہوٹل بند کرنا پڑا ہے۔

العربیہ ڈآٹ نیٹ کے مطابق مصر کے ساحلی علاقے الشیخ زاید میں قائم ایک ہوٹل کے مالکان نے سعودی عرب کے قومی لباس میں ملبوس ایک سعودی سیاح اور اس کے ہمراہ آئی اس کی فیملی کا استقبال نہ کرنے پر قاہرہ محکمہ سیاحت نے ہوٹل بند کرا دیا۔

مصری وزیرسیاحت خالد رامی کو یہ اطلاع ملی کہ الشیخ زاید کے مقام پر قائم ایک ہوٹل کے مالک نے سعودی عرب سے آئے ایک سیاح اور اس کے اہل خانہ کی میزبانی سے انکار کیا ہے تو انہوں نے ہوٹلنگ کی نگران انتظامیہ کو فوری طور پر واقعے کی تحقیقات کا حکم دیا۔ چھان بین سے پتا چلا کہ ہوٹل کی انتظامیہ نے سعودی فیملی کے ساتھ نا مناسب رویہ اختیار کیا تھا جس پر وزیرسیاحت نے ہوٹل کو بند کرنے کا حکم دے دیا ہے۔

مصری وزارت سیاحت کی ترجمان رشا العزایزی نے العربیہ ڈاٹ نیٹ کو بتایا کہ مصر اور سعودی عرب کے تعلقات معمول کے مطابق چل رہے ہیں اورہر آنے والے دن میں دونوں ملکوں کے درمیان تعلقات میں مزید پختگی آ رہی ہے۔ ایسے میں ہم کسی شخص کو دونوں ملکوں کے عوام میں بد اعتمادی کی فضاء پیدا کرنے کی اجازت نہیں دیں گے۔

وزارت سیاحت کی خاتون ترجمان کا کہنا تھا کہ ساحلی شہر میں واقع ایک ہوٹل کی انتظامیہ کی جانب سے سعودی شہری کی میزبانی سے انکار کر کے بد اعتمادی کی فضاء پیدا کرنے کی کوشش کی ہے۔ یہی وجہ ہے کہ وزیر سیاحت نے اس کا سختی سے نوٹس لیا ہے اور ہوٹل کو بند کرادیا گیا ہے۔ ترجمان کا کہنا تھا کہ وزارت سیاحت کی جانب سے فوری طور پر واقعے کا نوٹس لینے کو سعودی حکام اور ذرائع ابلاغ کی جانب سے سراہا گیا ہے۔

انہوں نے بتایا کہ وزیرسیاحت خالد رامی نے سعودی شہری کو اپنے دفتر میں بلا کر اس سے خود بھی معذرت کی ہے اور اسے یقین دہانی کرائی ہے کہ اس کے ساتھ نا مناسب رویہ اختیار کرنے والے ہوٹل کے خلاف سخت کارروائی کی گئی ہے۔