.

ایرانی کارگو جہاز معائنے کے لئے جبوتی میں لنگر انداز

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

یمن کے لئے امداد لیکر جانے والے ایران کے کارگو بحری جہاز کو جبوتی میں معائنہ کی غرض سے روک لیا گیا ہے۔

پاسداران انقلاب کی ہم خیال خبر رساں ایجنسی 'فارس' نے بتایا ہے کہ "ایران شاہد نامی کارگو بحری جہاز 2500 ٹن ادویہ اور اشیائے خورو نوش یمن کے متاثرہ عوام کے لئے لیکر جا رہا تھا، اسے جمعہ کی شام جبوتی کی بندرگارہ پر لنگر انداز کر لیا گیا ہے۔"

نیوز ایجنسی کے مطابق بحری جہاز جمعرات کے روز جبوتی کی علاقائی سمندری حدود میں تفتیش کی غرض سے داخل ہوا۔ اس مقصد کے لئے جبوتی بندرگارہ کے متعلقہ حکام سے باقاعدہ کوارڈی نیشن کی گئی۔

'فارس' کے مطابق جہاز پر لدے کارگو کو جبوتی میں موجود بین الاقوامی تنظیمیں چیک کریں گے، ان کی جانب سے گرین سنگل ملنے کے بعد جہاز یمن کی الحدیدہ بندرگارہ کی جانب اپنا سفر دوبارہ شروع کرے گا۔

قبل ازیں ایرانی وزارت خارجہ کے سیاسی اور بین الاقوامی سلامتی کے ڈائریکٹر جنرل حمید بعیدی نے بتایا تھا کہ انسانی امداد سے بھری ایرانی کارگو جہاز جمعرات کے روز معائنہ کے لئے جبوتی کی بندرگارہ پر لنگر انداز ہونا تھا، اس مقصد کے لئے اقوام متحدہ سے معاملات پہلے سے طے تھے۔ حمید بعیدی کا یہ بیان یو این سیکرٹری جنرل کے نائب ترجمان فرحان حق کے اس بیان کے بعد سامنے آیا جس میں کہا گیا تھا کہ ایرانی جہاز کی تفتیش تہران کے بجائے جبوتی میں کرنا طے پایا تھا۔

منگل کے روز امریکی وزارت دفاع پینٹاگان نے ایک اعلان میں بتایا تھا کہ امریکی فوج 'ایران شاہد' کارگو شپ کی مسلسل ٹریکنگ کر رہی ہے۔ دو لڑاکا جہاز بھی اس کارگو جہاز کی روانگی کے وقت سے اس کی نگرانی کر رہے ہیں۔

پینٹاگان کے ترجمان سٹیو وران نے ایک نیوز کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے بتایا کہ "ہمیں اس وقت زیادہ تشویش نہیں ہے کیونکہ ہم اس ایک جہاز کی نقل و حرکت کے بارے میں آگاہ ہیں۔"