.

فرانس کا وکی لیکس کے بانی کو پناہ دینے سے انکار

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

فرانس کے ایوان صدر کی جانب سے ایک بیان میں بتایا گیا ہے کہ پیرس حکومت نے عالمی سفارتی راز چوری کرنے کے بعد انہیں افشاء کرنے والی عالمی شہرت یافتہ ویب سائیٹ "وکی لیکس" کے بانی آسٹریلوی جولین اسائنچ کو اپنے ہاں پناہ دینے سے معذرت کرلی ہے۔

بیان میں کہا گیا ہے کہ جولین اسائنچ پچھلے تین سال سے لندن میں ایکواڈور کے سفارت خانے میں پناہ گزین ہیں۔ انہوں نے حال ہی میں فرانسیسی حکومت سے اپنے ہاں پناہ کی درخواست کی تھی لیکن قانونی پہلوئوں اور ان کی جسمانی حالت کے پیش نظر پیرس حکومت ان کی پناہ کی درخواست منظور نہیں کرسکتی۔

بیان میں کہا گیا ہے کہ اگرچہ جولین اسائنچ کی جسمانی صحت کسی بڑے خطرے کا سامنا نہیں کررہی ہے تاہم قانون پہلو سے بھی انہیں پناہ دینا فرانس کے لیے مشکل ہوگا کیوں کہ یورپی یونین ان کے وارنٹ گرفتاری جاری کرچکی ہے۔

خیال رہے کہ وکی لیکس کے بانی جولین اسائنچ نے تین سال قبل اس وقت عالمی شہرت حاصل کی تھی جب انہوں نے امریکا سمیت کئی بڑے ممالک کے ہزاروں کی تعداد میں سفارتی راز چوری کرنے کے بعد انہیں افشاء کرنے کا سلسلہ شروع کیا تھا۔