.

یمنی وزراء #ریاض سے #عدن منتقل ہو گئے

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

یمنی حکومت کے ذرائع نے 'العربیہ' کو بتایا کہ جمعرات کو علی الصباح ایک فوجی طیارہ کابینہ کے چند وزراء کو لیکر عدن پہنچا ہے۔ عدن پہنچنے والے عہدیداروں میں وزیر داخلہ بریگیڈئر جنرل عبدہ الحدیثی، وزیر مواصلات بدر باسلمہ اور وزیر مملکت صحت شامل تھے۔

صدر عبد ربہ منصور ھادی نے اپنی کابینہ کے متعدد ارکان اور سیکیورٹی عہدیداروں کو ریاض سے عدن واپسی کی ہدایت کی تھی تاکہ دنیا کو مقامی مزاحمت اور فوج کی باغیوں کے خلاف پیش قدمی اور کنڑول کا تاثر دیا جا سکے۔ اس اقدام کا مقصد عدن میں صورتحال میں تیزی سے بہتری لانا ہے۔

یمنی ایوان صدر کے ذرائع کے حوالے سے 'العربیہ' کو ملنے والی اطلاع کے مطابق صدر ھادی نے جن سیکیورٹی عہدیداروں کو ریاض سے یمن منتقل ہونے کی ہدایت کی ان میں نیشل سیکیورٹی کے سربراہ بریگیڈئر جنرل علی الاحمدی، پارلیمنٹ کے ڈپٹی اسپیکر محمد الشدادی اور سابق وزیر داخلہ جنرل حسین عرب شامل ہیں۔

یمنی عہدیداروں کو ریاض سے عدن منتقل ہونے کی ہدایت ایک ایسے وقت میں کی گئی ہے جب آئینی حکومت کی حامی فوج اور عوامی مزاحمت کار عدن کے مختلف علاقوں میں معزول صدر صالح اور حوثی ملیشیا کے خلاف کلین اپ آپریشن میں مصروف ہیں۔

عدن سے موصولہ اطلاعات کے مطابق یمنی فوج اور عوامی مزاحمت کاروں نے عدن کی اکثر کالونیوں کا کنٹرول سنبھال لیا ہے جبکہ باغیوں کے متعدد جتھوں کو التواہی اور کریتر کے علاقے میں گھیرے میں لیا جا چکا ہے اور انہیں ہتھیار ڈالنے کی ترغیب دی جا رہی ہے۔

ادھر یمنی حکومت نے اگلے چوبیس گھنٹوں میں پورے عدن کو باغیوں سے آزاد کرانے کا اعلان کیا ہے۔