.

ترکی میں 'ٹیوٹر بلاک'، سورج حملہ آور کی شناخت

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

ترکی کی ایک عدالت نے مائیکرو بلاگنگ سوشل ویب سائٹ "ٹیوٹر" کو بلاک کرنے کا حکم دیا ہے۔ دوسری جانب ترک حکام نے گذشتہ سوموار کو شام کی سرحد سے متصل سوریچ شہر میں ہوئے حملے کے خودکش بمبار کی شناخت کی ہے اور بتایا ہے کہ بمبار کی عمر 20 سال تھی۔

ترکی کی حکومت کے ایک ذریعے نے اپنی شناخت ظاہر نہ کرنے کی شرط پر عالمی خبر رساں ایجنسی" اے ایف پی" کو بتایا کہ "ڈی این اے" رپورٹ سے پتا چلا ہے کہ حملہ آور کی عمر تقریباً بیس سال تھی اور اس کا تعلق جنوب مشرقی ترکی کے ادرمان شہر سے تھا۔

ادھر ترکی کی ایک عدالت نے "ٹیوٹر" پر یہ کہہ کر پابندی عاید کی ہے کہ اس نے " سورج " شہر میں دہشت گردی کے واقعے کی تصاویر اور فوٹیج پوسٹ کر رکھی ہیں۔ عدالت نے انہیں ہٹانے کا حکم دیا تھا تاہم اس پرعمل درآمد نہیں کیا گیا جس کے بعد ترکی میں "ٹیوٹر" کو بلاک کر دیا گیا ہے۔

گذشتہ سوموار کے روز ترکی کے پبلک پراسیکیوٹر نے سورج کی ایک مجسٹریٹ اور فوج داری عدالت سے درخواست کی تھی کہ وہ "ٹیوٹر" کو خودکش حملے کے مناظر دکھانے سے منع کرے اور حملے سے متعلق ویب سائٹ پر پوسٹ کیا گیا مواد حذف کرنے کا حکم دے۔

عدالت نے ایک مختصر فیصلے میں "ٹیوٹر" کی انتظامیہ کو حملے سے متعلق تمام مواد بالخصوص تصاویر اور فوٹیج حذف کرنے کا حکم دیا تھا، جب کہ ٹیوٹر کی انتظامیہ کا کہنا ہے کہ اس نے بہ طور احتجاج یہ تصاویر پوسٹ کر رکھی ہیں۔ ترک حکومت کا کہنا ہے کہ احتجاج کا یہ طریقہ غیر قانونی ہے کیونکہ اس سے حملے سے متاثرہ لوگوں کی دل آزاری ہوتی ہے۔

ترک حکومت کے ایک عہدیدار نے بدھ کو بتایا کہ "ٹیوٹر" متنازع مواد حذف کر دے تو پابندی ختم کر دی جائے گی، تاہم اس سے داعش کی اس کارروائی کی تفصیلات اور تصاویر کو ہر صورت میں ہٹانا ہو گا۔

قبل ازیں منگل کے روز ترک وزیر اعظم احمد دائود اوگلو نے بھی دعویٰ کیا تھا کہ پولیس نے سورج میں دہشت گردی کے مرتکب شدت پسند کی شناخت کر لی ہے۔ انہوں نے صحافیوں سے بات کرتے ہوئے کہا کہ ممکنہ طور پر سورج میں دہشت گردی کا حملہ کرنے والے شدت پسند کے بیرون اور اندرون ملک شدت پسندوں کے ساتھ روابط تھے اور غالب امکان یہی ہے کہ یہ کارروائی دولت اسلامی "داعش" نے کی ہے۔ ترک وزیر اعظم نے حملے میں مارے جانے والے افراد کی تعداد 32 بیان کی اور کہا کہ حکومت اس کارروائی میں ملوث عناصر کو کیفر کردار تک پہنچانے میں کوئی کسر نہیں چھوڑے گی۔