.

قبرص اور اسرائیل دفاعی تعاون بڑھانے پر متفق

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

قبرص اور اسرائیل نے علاقائی سلامتی کے پیش نظر دو طرفہ فوجی تعاون بڑھانے پر اتفاق کیا ہے۔ اسرائیلی وزیراعظم بنجمن نیتن یاھو اور قبرصی صدر نیکوس اناسٹاسیاڈیس کے درمیان کل منگل کو ہوئی ملاقات کے بعد دونوں رہ نمائوں نے فوجی تعاون بڑھانے کا اعلان کیا۔ اسرائیلی وزیراعظم کا کہنا ہے کہ قبرص کے ساتھ فوجی تعاون نہایت اہمیت کا حامل ہے اور دونوں ملک دفاعی شعبے میں ایک دوسرے کے ساتھ تعاون کو تیار ہیں۔

خیال رہے کہ پچھلے ماہ قبرص نے ایک لبنانی شہری کو امونیا ناٹریٹ گیس ذخیرہ کرنے کے الزام میں حراست میں لیا تھا جسے لبنانی شیعہ ملیشیا حزب اللہ کی سازش قرار دیا گیا تھا۔ حزب اللہ کی مبینہ سازش کے الزام کے بعد اسرائیل اور قبرص میں قربت پیدا ہوگئی تھی۔

اپنے دورہ قبرص کے دوران قبرصی صدر سے ملاقات کے بعد ایک مشترکہ نیوز کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے نیتن یاھو نے کہا کہ "ہم خطے میں ایسا امن چاہتے ہیں جو دفاعی تقاضوں کے تحت ہو۔ اگر خطے کے ممالک کا دفاع مضبوط نہ ہوا تو علاقائی تباہی کو کوئی نہیں بچا سکتا۔"

خیال رہے کہ قبرص کو اسرائیل کی نسبت فلسطینیوں کے ساتھ زیادہ قریب سمجھا جاتا ہے لیکن پچھلے کچھ برسوں میں اسرائیل اور قبرص کے درمیان تعلقات بھی پروان چڑھے ہیں۔ اس کا اندازہ دونوں ملکوں کی صف اول کی سیاسی قیادت کے ایک دوسرے کے بارے میں القابات سے بھی ہوتا ہے۔ قبرصی صڈر اناسٹاسیاڈیس ایک سے زائد مرتبہ فلسطینیوں کے قاتل" بنجمن نیتن یاھو" کو "عزیز دوست" کا لقب دے چکے ہیں۔