.

عالمی افتاء کونسل کا مرکزی سیکرٹریٹ قاہرہ میں ہو گا

بین الاقوامی علماء کونسل آئںدہ ہفتے مصر میں ہو گی

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

مصر کے مفتی اعظم شوقی علام نے کہا ہے کہ دنیا کے 50 ملکوں سے تعلق رکھنے مفتیان کرام کی دو روزہ عالمی کانفرنس آئندہ سوموار اور منگل کو قاہرہ میں منعقد ہو گی جس میں عالمی افتاء کونسل کا قیام عمل میں لایا جائے گا۔ اس ضمن میں بین الاقوامی افتاء کونسل کے مرکزی سیکرٹیریٹ قاہرہ میں بنانے کا فیصلہ کیا گیا ہے۔

العربیہ ڈاٹ نیٹ کے مطابق مصر کے مفتی اعظم کا کہنا ہے کہ عالم اسلام کے نمائندہ علماء کرام اور مفتیاں عظام کے قاہرہ میں منعقدہ اجلاس کا مقصد مشترکہ نوعیت کے مسائل کے بارے میں متفقہ فتاویٰ کے صدور کے لیے ایک فورم مہیا کرنا ہے۔ اس کے علاوہ علماء اور مختلف ملکوں کے مفتی حضرات فتاویٰ کے اجراء کے حوالے سے ایک جامع معاہدہ کریں گے جس سے بعد ازاں پوری دنیا بالخصوص یورپ، براعظم ایشیا، افریقا، آسٹریلیا اور دونوں امریکی براعظموں کے علماء اور مفتیان تک پھیلایا جائے گا۔

مصری مفتی اعظم کے مشیر ڈاکٹر ابراہیمی نجم کا کہنا ہے کہ عالمی علماء اور مفتیان کی کانفرنس کے انعقاد کا مقصد مصر کے عالمی فتاویٰ کے حوالے سے مرکزی کردار کو بحال کرنا ہے۔ انہوں نے کہا کہ فتویٰ کا ادارہ بہت قدیم ہے بڑا علمی تاریخی بوجھ ہونے کے ساتھ ایک بڑی ذمہ داری بھی ہے۔ مصر افتاء کے ادارے کو نہ صرف مصر اور عرب ممالک کی حد تک منظم و مربوط بنانا چاہتا ہے بلکہ اسے ایک بین الاقوامی نمائندہ ادارہ بنانے کا خواہاں ہے تاکہ مشترکہ نوعیت کے مسائل پر عالم اسلام کی طرف سے متفقہ فتاویٰ کا صدور عمل میں لا کر اختلافی امور کر کم کیا جا سکے۔ بالخصوص تیزی سے پھیلتے جہادی اور تکفیری فتاویٰ کو غیر موثر بنانے کے لیے متبادل فتاویٰ کے اجراء کا عمل شروع کیا جائے۔

ڈاکٹر ابراہیم کا کہنا تھا کہ اس وقت دنیا بھرمیں ہمہ نوع قسم کی جماعتیں اور تنظیمیں مرضی کے فتوے صادر کرکے عوام الناس میں گمراہی، انارکی اور مذہب کے حوالے سے انتشار کو ہوا دے رہی ہیں۔ ایسے حالات میں عالم اسلام کو کسی ایسے نمائندہ فتاویٰ فورم کی اشد ضرورت ہے جو ہر قسم کے شکوک وشبہات سے بالا تر، انتہا پسندی کے بجائے اعتدال پسندی کا مظہر ہو اور عصر حاضرت کے تقاضوں سے بھی ہم آہنگ فتاویٰ جاری کر سکے۔