امریکا بدستور ''شیطان بزرگ'' ہے: ایرانی جنرل

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

ایران کی ایلیٹ پاسداران انقلاب فورس کے سربراہ نے کہا ہے کہ امریکا ان کے ملک کے ساتھ تاریخی جوہری معاہدے کے باوجود بدستور شیطان بزرگ ہی ہے۔

جنرل محمد علی جعفری کا یہ بیان پاسداران انقلاب کی سرکاری ویب سائٹ پر منگل کو جاری کیا گیا ہے۔انھوں نے کہا ہے کہ ''ایران کے جوہری پروگرام پر معاہدے کے باوجود امریکا کی ایرانی قوم کے ساتھ دشمنی میں کوئی کمی واقع نہیں ہوئی ہے اور اس میں اضافہ ہی ہوا ہے''۔

ایرانی جنرل نے کہا کہ ''ہمیں امریکا سے دھوکے میں نہیں رہنا چاہیے،وہ ایران میں نئے آلات اور نئے طریقوں کے ذریعے دراندازی کرنا چاہتا ہے''۔

واضح رہے کہ پاسداران انقلاب اور ایران کے سخت گیر جوہری معاہدہ طے پانے کے بعد سے امریکا کے بارے میں اپنے شکوک کا اظہار کررہے ہیں۔قبل ازیں منگل ہی کو ایران کی شورائے نگہبان کے سربراہ آیت اللہ محمد یزدی نے کہا ہے کہ جوہری معاہدے سے ایران کی امریکا کے بارے میں خارجہ پالیسی میں کوئی تبدیلی رونما نہیں ہوگی۔

انھوں نے کہا کہ ''اسلامی جمہوریہ ایران امریکا کو دشمن نمبر ایک قرار دیتا ہے۔اگر آپ آج دنیا بھر میں ہونے والی گڑبڑ اور بغاوتوں کی جڑ کا سراغ لگانے کی کوشش کریں گے تو آپ کو پتا چلے گا کہ ان کا بڑا حامی امریکا ہی ہے''۔

ان کے اس بیان سے قبل ایران کے سپریم لیڈر آیت اللہ علی خامنہ ای بھی اسی قسم کے خیالات کا اظہار کرچکے ہیں۔انھوں نے ابھی تک واضح طور جوہری معاہدے کی حمایت کا بھی اظہار نہیں کیا ہے۔البتہ انھوں نے اپنے ملک کے مذاکرات کاروں کے کام کی تعریف کی تھی۔

درایں اثناء تہران کے پولیس سربراہ جنرل حسین ساجدینیہ نے ایک بیان میں بتایا ہے کہ افسروں نے بعض افراد کو امریکا ،اسرائیل اور برطانیہ کے پرچموں اور شیطانی علامات والے ایپرل تقسیم کرنے کے الزام میں گرفتار کر لیا ہے۔ایران میں بالعموم اس طرح مغربی اشیاء تقسیم کرنے والوں کو کریک ڈاؤن کا سامنا کرنا پڑتا ہے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں