ایران کے خلاف فوجی کارروائی خارج از امکان نہیں: ہیلری

'صدر منتخب ہوکر امریکا اور اتحادیوں کا ہر ممکن دفاع کروں گی'

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

امریکا میں آئندہ سال ہونے والے صدارتی انتخابات کی دبنگ امیدوار سابق خاتون اول و وزیر خارجہ ہیلری کلنٹن نے کہا ہے کہ اگر ایران نے جوہری ہتھیارحاصل کرنے کی کوشش کی تو اس کے خلاف فوجی کارروائی کا امکان موجود ہے۔ ان کا کہنا تھا کہ ایران کو عالمی طاقتوں کے ساتھ طے پائے سمجھوتے کی تمام شرائط پرعمل درآمد کرنا ہوگا ورنہ تہران کے خلاف اقتصادی پابندیوں کےنفاذ میں کوئی تساہل نہیں برتا جائے گا۔

العربیہ ڈاٹ نیٹ کے مطابق ایک تقریب سے خطاب کرتے ہوئے امریکی صدارتی امیدوار ہیلری کلنٹن کا کہنا تھا کہ انہیں ایران اور عالمی طاقتوں کے درمیان طے پائے معاہدے سے اتفاق ہے، تاہم ایران کی پالیسی کے بارے میں شک یا یقین کا فیصلہ سنہ 2016ء کے صدارتی انتخابات میں کامیابی کے بعد ہی کیا جائے گا۔

انہوں نے کہا کہ صدر منتخب ہوکر میں امریکا اور اپنے اتحادیوں کے دفاع کے لیے ہرممکن اقدام اٹھائوں گی۔ ایران کی جانب سے جوہری معاہدے کی خلاف ورزی کی صورت میں تہران کے خلاف فوجی کارروائی سے گریز نہیں کیا جائے گا۔

ہیلری کلنٹن کا کہنا تھا کہ انہیں توقع ہے کہ ایران معاہدے کے اصولوں اور اس کے قواعد و ضوابط کی پابندی کرے گا۔ ان کا اشارہ جولائی میں چھ بڑی طاقتوں اور ایران کے درمیان طے پائے معاہدے کی جانب تھا۔معاہدے میں امریکا، روس اور چین جیسے بڑے ممالک شامل تھے۔

سابق خاتون اول کا کہنا تھا کہ یران کی جانب سے معاہدے کی خلاف ورزیوں کی صورت میں ہم اپنا موقف واضح کریں گے اور تہران کو معمولی خلاف ورزی کی بھی معاشی پابندیوں کی صورت میں سزا بھگتنا ہوگی۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں