.

سعودی عرب :شامی مہاجرین سے متعلق جھوٹے الزامات کی مذمت

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

سعودی عرب کے فرمانروا شاہ سلمان بن عبدالعزیز نے مسجد الحرام میں کرین کے حادثے میں زخمی ہونے والے عازمین حج کو علاج کی ہر ممکن سہولتیں مہیا کرنے کی ہدایت کی ہے اور متعلقہ اداروں کو یہ بھی حکم دیا ہے کہ انھیں حج کی ادائی میں ہر طرح کی مدد مہیا کی جائے۔

وہ جدہ میں کابینہ کے اجلاس کی صدارت کررہے تھے۔کابینہ نے شامی مہاجرین سے متعلق سعودی عرب پر لگائے جانے والے بے بنیاد الزامات کی مذمت کی ہے۔ سعودی عرب کے وزیر ثقافت اور اطلاعات ڈاکٹر عادل الطریفی نے اجلاس کے بعد صحافیوں کو بتایا ہے کہ کابینہ نے اسی ماہ ہونے والے حج اور سکیورٹی کے انتظامات کا جائزہ لیا ہے۔

انھوں نے کہا کہ کابینہ نے شامی مہاجرین کے بحران کے حوالے سے سعودی عرب کی ذمے داری سے متعلق جھوٹے ،بے بنیاد اور گم راہ کن الزامات کا جائزہ بھی لیا ہے اور انھیں مسترد کردیا ہے۔

انھوں نے سعودی مملکت کے اس موقف کا اعادہ کیا کہ وہ شامی بھائیوں کی امداد کرنے والے ممالک میں سب سے پہلے نمبر پر رہے گا اور وہ شام اور شامی مہاجرین سے متعلق اپنے مؤقف کے حوالے سے کسی قسم کے اعتراض اور دباؤ کو قبول نہیں کرے گا۔

انھوں نے شام میں جاری خانہ جنگی کے نتیجے میں انسانی مصائب کا ذکر کرتے ہوئے کہا کہ سعودی عرب نے انھیں کم کرنے کے لیے اقدامات کیے ہیں اور وہ شام میں خانہ جنگی کے آغاز کے بعد سے قریباً پچیس لاکھ شامیوں کی میزبانی کررہا ہے۔

سعودی کابینہ نے ہمسایہ ریاست بحرین میں الخامس پولیس مرکز پر دہشت گردی کے حملے اور مقبوضہ بیت المقدس میں اسرائیلی فورسز کے مسجد الاقصیٰ میں دھاوے کی بھی مذمت کی ہے۔اسرائیلی فورسز نے مسجد الاقصیٰ کی بے حرمتی کی ہے اور وہاں گذشتہ تین روز سے قابض فورسز اور فلسطینیوں کے درمیان جھڑپیں جاری ہیں۔

واضح رہے کہ گذشتہ جمعہ کو شدید آندھی کی وجہ سے تعمیراتی کام کے لیے استعمال ہونے والی ایک بڑی کرین مسجد الحرام میں گر گئی تھی۔اس ناگہانی حادثے میں ایک سو سات افراد جاں بحق اور دو سو چالیس زخمی ہوگئے تھے۔ جاں بحق ہونے والے افراد میں 15 پاکستانی ،23 مصری،10 بھارتی ،25 ایرانی ،6 ملائشیائی ،25 بنگلہ دیشی اور ایک الجزائری اور ایک افغان شامل ہے۔

سعودی عرب کے ایک اعلیٰ عہدے دار کا کہنا ہے کہ ''مسجد الحرام میں کرین گرنے کے حادثے کے باوجود حج معمول کے مطابق ہوگا۔یہ واقعہ حج پر اثر انداز نہیں ہوگا اور مسجد الحرام کے متاثرہ حصوں کی آیندہ چند روز میں مرمت کردی جائے گی۔حج کے مناسک واعمال یقینی طور پر معمول کے مطابق جاری رہیں گے''۔