یمنی باغی 'صعدہ' کو متبادل دارالحکومت بنانے کے لیے کوشاں

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

#یمن کے ایک باوثوق ذریعے نے انکشاف کیا ہے کہ حوثی باغی اور سابق صدر #علی_صالح #صعدہ گورنری کو #صنعاء کے متبادل ملک کا دارالحکومت بنانے کے لیے کوشاں ہیں۔ یہ انکشاف ایک ایسے وقت میں ہوا ہے جب یمن میں حکومت نواز فورسز اور اتحادی دارالحکومت صنعاء کو باغیوں سے چھڑانے کے لیے بھرپور کوششیں کررہے ہیں۔

العربیہ ڈاٹ نیٹ کو صنعاء کے ایک باوثوق ذریعے نے بتایا کہ ایران نواز حوثی لیڈر #عبدالملک_الحوثی اور سابق منحرف صدر علی عبداللہ صالح صعدہ گورنری کو ملک کا متبادل دارالحکومت بنانے کے لیے کوشاں ہیں کیونکہ صنعاء کے ہاتھ سے نکل جانے کے بعد ان کے پاس کوئی متبادل مرکز نہیں رہے گا۔ اس لیے وہ اپنے گڑھ صعدہ کو نیا دارالحکومت بنانے کی تجویز پر غور کررہے ہیں۔

ذرائع کا کہنا ہے کہ صعدہ کو صنعاء کا متبادل دارالحکومت قرار دینے کی تجویز حوثیوں کی جانب سے پیش کی گئی جسے سابق منحرف صدر علی عبداللہ صالح نے بھی پسند کیا ہے۔ ذرائع کا یہ بھی کہنا ہے کہ حوثی لیڈر صعدہ ہی کو ملک کا مستقل دارالخلافہ بنانے پر مُصِر ہیں۔ان کی خواہش ہے کہ دارالحکومت صنعاء کے بجائے صرف صعدہ قرار پائے۔

ذرائع کا کہنا ہے کہ #ایران کی جانب سے بھی حوثیوں کی اس تجویز کا خیر مقدم کیا گیا ہے۔ ایران بھی یہی چاہتا ہے کہ وہ صنعاء جیسے سنی اکثریتی شہر کو یمن کا داراحکومت بنانے کے بجائے شیعہ مسلک کا گڑھ سمجھے جانے والے صعدہ کو ملک کا دارالحکومت بنائیں۔

یمن کے ایک تجزیہ نگار نے اپنی شناخت ظاہر نہ کرنے کی شرط پربتایا کہ حوثیوں کی جانب سے صنعاء کے بجائے صعدہ کو دارالحکومت بنانے کی تجویز سے ظاہر ہوتا ہے کہ باغی #اقوام_متحدہ کی قرارداد 2216 کو تسلیم کرنے سے انکاری ہیں۔ ایسی تجاویز وہی شخص دے سکتا ہے جو یمن میں دیر پا قیام امن کے بجائے فرقہ واریت کے بیج ہونے کی سازش کررہا ہو۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں