یمنی صدر کی 6 ماہ کی جلاوطنی کے بعد عدن واپسی

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

یمنی صدر عبد ربہ منصور ہادی سعودی عرب میں قریباً چھے ماہ کی جلاوطنی کے بعد منگل کے روز جنوبی شہر عدن پہنچ گئے ہیں۔وہ مارچ میں حوثی شیعہ باغیوں کی جنوبی شہروں کی جانب یلغار اورعدن پر قبضے کے بعد سعودی دارالحکومت الریاض چلے گئے تھے جہاں سے وہ جلا وطن حکومت چلا رہے تھے۔

یمنی حکومت کے ایک ذریعے نے بتایا ہے کہ صدر منصورہادی عیدالاضحیٰ عدن ہی میں منائیں گے اور اس کے بعد وہ نیویارک روانہ ہوجائیں گے جہاں وہ اقوام متحدہ کی جنرل اسمبلی کے سالانہ اجلاس سے خطاب کریں گے۔

یمن کے وزیراعظم اور نائب صدر خالد بحاح اپنی کابینہ کے سات وزراء اور دیگر اعلیٰ حکام کے ہمراہ گذشتہ ہفتے الریاض سے عدن لوٹے تھے اور اب وہ حکومت کی وفادار فورسز کے عمل داری والے علاقوں میں روزمرہ امور مملکت چلا رہے ہیں۔

وہ اب سرکاری فوج اور اس کی اتحادی ملیشیاؤں کے کنٹرول والے علاقوں میں عسکری اور سیاسی اصلاحات پر اپنی توجہ مرکوز کررہے ہیں اور وہاں امن وامان کی بحالی اور استحکام کو یقینی بنانے کے لیے اقدامات کررہے ہیں۔

اس وقت یمنی دارالحکومت صنعا اور وسطی اور شمالی شہروں پر سعودی عرب کی قیادت میں اتحادی ممالک کے لڑاکا طیارے حوثی شیعہ باغیوں کے ٹھکانوں پر بمباری کررہے ہیں۔حوثیوں نے گذشتہ سال ستمبر سے صنعا میں اپنی عمل داری قائم کررکھی ہے۔

حوثی باغیوں اور ان کے اتحادی سابق صدر علی عبداللہ صالح کی وفادار فورسز کی اس سال مارچ میں جنوبی شہروں کی جانب یلغار کے بعد صدر عبد ربہ منصور ہادی اور ان کی کابینہ کے ارکان الریاض چلے گئے تھے۔عدن پر جولائی میں یمنی فوج اور ان کے اتحادی جنوبی مزاحمت سے تعلق رکھنے والے جنگجوؤں کے دوبارہ قبضے کے بعد ان کی حکومت کے بیشتر اعلیٰ عہدے دار واپس آچکے ہیں۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں