فوکس ویگن کو دھوکا دہی پر 18 ارب ڈالر جرمانہ

'بد دیانتی سے ایک کروڑ دس لاکھ گاڑیاں متاثر ہوئیں'

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
3 منٹس read

گاڑیاں بنانے والی معروف جرمن کمپنی #ووکس_ویگن کا کہنا ہے کہ گاڑیوں میں مضر صحت گیس کے اخراج جانچنے کے طریقہ کار میں ان کی کمپنی کی بددیانتی سے ایک کروڑ دس لاکھ گاڑیاں عالمی سطح پر متاثر ہوئی ہیں۔

کمپنی نے کہا کہ اس نے اپنی غلطی کے معاوضے کے لیے 7 ارب 30 کروڑ ڈالر کا انتظام کیا ہے۔

ووکس ویگن کے امریکی کاروبار کے سربراہ نے تسلیم کیا ہے کہ ان کی کمپنی نے گاڑیوں میں مضر صحت گیس کے اخراج کی سطح جانچنے کے طریقہ کار میں ایک سافٹ ویئر کی مدد سے بددیانتی کی ہے

#امریکا میں ووکس ویگن کمپنی کے سربراہ مائیکل ہارن نے کہا: ’ہماری کمپنی نے ماحولیاتی تحفظ کے ادارے (ای پی اے) اور امریکی ریاست #کیلیفورنیا کے فضائی آلودگی سے تحفظ کے ادارے کو دھوکے میں رکھا۔ یہی نہیں بلکہ آپ سب کو بھی دھوکے میں رکھا ہے۔ میرے جرمن الفاظ میں یوں سمجھیں کہ ہم بہت بڑی غلطی کے مرتکب ہو چکے ہیں۔‘

کمپنی نے سافٹ وئر کو تبدیل کرنے کے لئے 7 ارب 30 کروڑ ڈالر مختص کرنے کا اعلان کیا تاکہ کمپنی برانڈ پر صارفین کا اعتماد بحال کیا جا سکے۔

ووکس ویگن کے بیان میں کہا گیا ہے کہ کمپنی اس انحراف کو سنجیدگی سے ختم کرنے کے لئے کام کر رہی ہے، جس کی وجہ سے اخراج حرارت کے امریکی نظام کو دھوکہ دینا ممکن ہوا۔

قبل ازیں، فرانسسی وزیر خزانہ نے بھی #یورپ بھر میں ووکس ویگن کی ان گاڑیوں کی چھان بین کا مطالبہ کیا ہے۔ مائیکل اسپین نے فرانسسی ریڈیو سے بات چیت میں کہا کہ ووکس ویگن کے ساتھ ساتھ فرانسسی کارسازوں کی بھی جانچ کی جائے، حالانکہ فرانسسی کار سازوں پر شک کرنے کا کوئی جواز نہیں۔

کمپنی کو سافٹ وئر کی ان خرابیوں کو دور کرنے میں آنے والے بھاری اخرجات کے علاوہ 18 ارب ڈالر کے جرمانے کی سزا کا بھی سامنا ہے۔ دوسری جانب، اسٹاک ایکسچنج میں اس کے شیئر کی قیمتیں 20 فیصد تک گر گئی ہیں۔

امریکی ماحولیاتی تحفظ کے ادارے، ای پی اے کے مطابق ووکس ویگن نے خفیہ طور پر اپنے کئی مقبول ماڈلز میں ایسا آلہ نصب کیا تھا، جس میں موجود سافٹ وئر صرف اس وقت کام کرتا تھا، جب اخراج حرارت کی لازمی جانچ کی جاتی تھی اور بقیہ اوقات میں یہ کاربن ڈائی اکسائیڈ کے اخراج کو کنڑول نہیں کرتا تھا۔

اس کے نتیجے میں یہ کاریں 40 فیصد زیادہ حرارت خارج کرتی رہیں، کیونکہ جن کاروں میں آلودگی کو قابو میں لانے کا نظام نہ نصب ہو ان کی کارکردگی عموماً بہتر ہوتی ہے اور فیول بھی کم خرچ ہوتا ہے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں