.

امریکا نے شامی اپوزیشن کی تربیت ملتوی کر دی

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

امریکی محکمہ دفاع پینٹاگان نے شام میں صدر بشارالاسد کے خلاف لڑنے والے اعتدال پسند شامی اپوزیشن گرپوں کے کارکنوں کی عسکری تربیت کچھ عرصہ کے لیے روکنے کا اعلان کیا ہے۔

امریکی وزارت دفاع کی جانب سے جاری ایک بیان میں کہا گیا ہے کہ شامی اپوزیشن کے ماتحت جنگجوئوں کی عسکری تربیت اور انہیں جنگ کے لیے تیار کرنے کا پروگرام کچھ عرصے کے لیے ملتوی کردیا گیا ہے۔ اس سے قبل کی گئی تربیت کے نتائج کو سامنے رکھتے ہوئے دوبارہ عسکری تربیت دینے کے پروگرام پر غور بعد میں کیا جائے گا۔

امریکی وزارت دفاع کے ترجمان پیٹر کک نے کہا کہ "شامی اپوزیشن کی عسکری تربیت کچھ وقت کے لیے روکی جا رہی ہے۔ شامی اپوزیشن کے کارکنوں کو ترکی اور اردن کے تربیتی مراکز میں منتقل کیا جا رہا ہے۔ مستقبل میں شامی اپوزیشن کے کارکنوں کی بھرتی اور ان کی تربیت کا عمل دوبارہ شروع ہو گا۔

ترجمان کا کہنا تھا کہ جن کارکنوں کو عسکری تربیت کے میں شامل کیا گیا ہے ان کی تربیت جاری رہے گی تاہم مزید افراد کو شامل نہیں کیا جائے گا۔

خیال رہے کہ امریکا نے اردن اور ترکی کے تعاون سے رواں سال کے آغاز میں ہر سال شامی اپوزیشن کے 5 ہزار جنگجوؤں کو دولت اسلامی "داعش" کے خلاف جنگ کے لیے تیار کرنے کا ایک پروگرام شروع کیا تھا۔ اس پروگرا پر 500 ملین ڈالر کا تخمینہ لگایا گیا تھا۔ تاہم کئی ماہ گذرنے کے باوجود ابھی تک تربیتی عمل سے صرف 54 یا 70 افراد کو تربیت دی جا سکی ہے۔