.

شامی لڑائی میں چھاتہ بردار سمیت 8 ایرانی ہلاک

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

ایرانی پاسداران انقلاب کے دو مشیران سمیت 8 اہلکار شمالی شام کے شہر حلب میں ہونے والی لڑائی میں ہلاک ہو گئے۔

ایران کے فارسی خبر رساں اداروں کے مطابق مرنے والے ایرانیوں میں وسطی ایران کی فارس گورنری کے شہر جھرم میں تعینات پاسداران انقلاب کے 33 ایئر بورن یونٹ کا ایک چھاتہ بردار بھی شامل ہے۔

اطلاعات کے مطابق مرنے والوں میں 'فاطمیون' بٹالین کے رضا خاوری نامی افغانی شہری بھی شامل تھے۔

پاسدران انقلاب کے میڈیا کوارڈی نیٹر بریگیڈئر رمضان شریف نے عبداللہ باقری اور امین کریمی نامی اپنے دو مشیران کی ہلاکت کی بھی تصدیق کی ہے۔

'فارس' نیوز ایجنسی نے رمضان شریف کا ایک بیان نقل کیا ہے کہ ان کے متذکرہ دونوں اہلکار جمعرات اور جمعہ کے روز شام میں ایک مشن کے دوران ہلاک ہوئے۔

رمضان شریف نے مزید کہا کہ شام میں صورتحال بہتر ہونے پر ان کا ملک شیعہ مسلک کے اہم مقامات کے تحفظ کی خاطر اپنی فوج میں اضافہ کرے گا۔

نیز پاسدران انقلاب کے ایلیٹ یونٹ کے افسران جنہیں 'مشیران' کا نام دیا جاتا ہے انہیں بھی بڑی تعداد میں تعینات کرے گا۔ تہران میں سرکاری سطح پر بشار الاسد کی حکومت کا آخری حد تک ساتھ دینے کے اعلانات کا سلسلہ جاری ہے۔

حلب میں ایرانی فوجیوں کی پہلی فلم

درایں اثنا بشار الاسد کی فوج کے جنگی خبروں سے متعلق پورٹلز پر ایک ویڈیو کلپ تیزی سے مقبول ہو رہا ہے جس میں حلب کے اندر شامی اپوزیش کے خلاف ایرانی فوجیوں کو برسر پیکار دکھایا گیا ہے۔

ویڈیو کلپ میں ایرانی فوجی، جنوبی حلب کے علاقے میں اپوزیشن ٹھکانوں کو فوجی جیپ سے ہاون راکٹ سے نشانہ بناتے دیکھے جا سکتے ہیں۔ 'العربیہ' کی فارسی ویب سائٹ کے مطابق کلپ میں پاسدران انقلاب کے اہلکاروں کو آپس میں فارسی زبان میں باتیں کرتے دیکھا اور سنا جا سکتا ہے۔