.

فرانس میں المناک ٹریفک حادثے کی تحقیقات کا آغاز

حادثہ فرانس کی تیس سالہ تاریخ کا بدترین واقعہ ہے

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

فرانس میں دو روز پیشتر ملک کے جنوب مغربی شہر"بویسوگین" میں ایک مسافر بس اور ٹرک کے درمیان تصادم کے نتیجے میں ہونے والے المناک حاثے کی تحقیقات شروع کردی گئی ہیں۔ حادثے میں مجموعی طور پر 43 افراد جاں بحق ہوگئے تھے۔ یہ واقعہ فرانس کی تیس سالہ تاریخ کا ٹریفک حادثات کا المناک واقعہ ہے۔ ماہرین نے حادثے میں مارے جانے والےمسافروں کی شناخت اور حادثے کے اسباب ومحرکات پر تحقیقات شروع کردی ہیں۔
العربیہ ڈاٹ نیٹ کے مطابق حادثے کے نتیجے میں زخمی ہونے والے بیشتر افراد کو علاج کے بعد اسپتالوں سے ڈسچارج کر دیا گیا تھا تاہم آٹھ زخمی تا حال اسپتالوں میں زیرعلاج ہیں مگر ان کی زندگی خطرے سے باہر بتائی جا رہی ہے۔
ہفتے کے روز "بویسو گین" شہر کے کریمینل ریسرچ انسٹیٹیوٹ کے ماہرین نے حادثے میں مارے جانے والے افراد بالخصوص زندہ جل کر ناقابل شناخت ہونے والی میتوں کی شناخت کا عمل شروع کر دیا تھا۔ ماہرین کا کہنا ہے کہ شناخت اور تحقیقات کا عمل تین ہفتے تک جاری رہ سکتا ہے۔
جنوب مغربی فرانس میں پیش آنے والے اس المناک ٹریفک حادثے سے پورا ملک سوگ اور غم میں ڈوب گیا ہے۔
گذشتہ روز "پیٹی بالیہ ای کونیمپ" کے مقام پر حادثے میں مارے جانے والے شہریوں کے لیے ایک تعزیتی جلوس کا اہتمام کیا گیا جس میں صدر فرانسو اولاند سمیت ملک کی اعلیٰ سیاسی و سماجی شخصیات نے شرکت کی۔
خیال رہے کہ سنہ 1982ء کے بعد فرانس کی تاریخ کا یہ نہایت المناک ٹریفک حادثہ ہے۔ سنہ 1982ء میں ملک کے مشرقی شہر بون میں ایسے ہی ایک ٹریفک حادثے میں 44 بچوں سمیت 53 افراد لقمہ اجل بن گئے تھے۔