.

تعز سے باغیوں کی بیدخلی کا فیصلہ کن معرکہ تیار!

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

یمن میں سعودی عرب کی قیادت میں اتحادی فوج اور حکومت کی ماتحت فوج اور ملیشیا نے ساحلی شہر تعز کو حوثی شیعہ باغیوں اور علی صالح کے وفاداروں سے چھڑانے کے لیے فیصلہ کن معرکے کی تیاریاں شروع کر دی ہیں۔

العربیہ ٹی وی کی رپورٹ کے مطابق اتحادی فوج کی جانب سے مزاحمتی کارکنوں اور حکومتی فورسز کو ٹینکوں اور بکتر بند گاڑیوں کی نئی کھیپ پہنچا دی گئی ہے۔ اسکے ساتھ ساتھ حوثیوں کے ٹھکانوں پر فضائی حملے بھی جاری ہیں جن میں دشمن کو بھاری جانی اور مالی نقصان سے دوچار کیا گیا ہے۔

میڈیا رپورٹس کے مطابق اتحادی طیاروں نے مغربی تعز کی سینٹرل جیل کے جنوب میں باغیوں کے ٹھکانوں پر متعدد فضائی حملے کیے ہیں۔ فضائی حملوں کے سائے میں مزاحمتی کارکنوں نے تعز کی کئی کالونیوں میں پیش قدمی بھی جاری رکھی ہوئی ہے۔ المضاربہ اور الوازعیہ کے محاذوں سے حوثی باغیوں کو پسپا کیا گیا ہے۔

اتحادی طیاروں نے شبوۃ گورنری میں بیحان ڈاریکٹوریٹ اور اس کے مضافات میں باغیوں کے ٹھکانوں پر بمباری کی ہے جس میں درجنوں حوثی ہلاک اور زخمی ہوئے ہیں۔ متعدد حوثی باغیوں کو حراست میں بھی لیا گیا ہے۔

الضالع گورنری میں بھی باغیوں اور حکومتی فورسز کے درمیان لڑائی کی اطلاعات ہیں جہاں باغیوں کو غیرمعمولی نقصان پہنچا گیا ہے۔