.

روس ۔ مصر کا فضائی رابطہ کئی مہینوں کے لئے منقطع!

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

روس کے مسافر طیارے کو مصر میں پیش آنے والے حادثے کے تناظر میں دونوں ملکوں کے درمیان فضائی رابطے کئی مہینوں تک منقطع ہونے جا رہے ہیں۔

اس امر کا اعلان کرملین کے چیف آف سٹاف نے ایک بیان میں کیا ہے۔ گذشتہ مہینے سیناء کی فضائی حدود میں روسی طیارے کو پیش آنے والے حادثے میں 224 مسافر لقمہ اجل بن گئے تھے۔ حادثے کی وجوہات ابھی تک معلوم نہیں ہو سکیں۔

انٹر فیکس نیوز ایجنسی نے کرملین کے چیف آف سٹاف سرگئی ایوانوف کا ھلسینکی میں صحافیوں سے گفتگو کے موقع پر دیا گیا ایک بیان نقل کیا ہے جس میں ان کا کہنا تھا "کہ یہ [انقطاع] لمبی مدت کے لئے ہو گا، کتنی مدت تک ہو گا، میں کچھ کہہ نہیں سکتا لیکن میرا خیال ہے یہ کم سے کم کئی مہینوں کے لئے ہو گا۔"

مسٹر ایوانوف نے کہا کہ "ایمانداری کی بات ہے کہ ہم نے کریش کی حتمی رپورٹ آنے سے پہلے مصر کے لئے پروازیں بند کی ہیں، تاہم ہم نے یہ اقدام پیشگی حفاظتی تدبیر کے طور پر کیا ہے۔"

انہوں نے مزید کہا کہ شرم الشیخ سمیت ساحلی سیرگاہ الغردقہ اور قاہرہ کے ہوائی اڈوں پر سیکیورٹی کے نظام میں بہتری لانے کی ضرورت ہے۔ ان مقامات سے روسی جہاز پرواز کرتے ہیں۔

روس نے 31 اکتوبر کو سیناء میں کریش کر جانے والے اپنے مسافر طیارے کی حتمی تحقیقاتی رپورٹ سامنے آنے تک مصر کے لئے اپنی پروازیں چھ نومبر کو بند کر دیں تھیں۔

مصر میں چھٹیاں گزارنے کے لئے آنے والے روسی صحت افزا مقام شرم الشیخ سے صرف دستی سامان ساتھ لیکر خصوصی پروازوں کے ذریعے وطن واپس جا رہے ہیں، ان کا باقی سامان الگ پرواز سے روس بھیجنے کا انتظام کیا جا رہا ہے۔

واضح رہے کہ برطانیہ اور امریکا نے اس شک کا اظہار کیا ہے کہ میٹرو جیٹ A-321 طرز کے روسی مسافر طیارے کو بم کے ذریعے تباہ کیا گیا، لیکن مصری حکام کا باصرار کہہ رہے ہیں کہ ابھی تک کوئی ایسا ثبوت نہیں ملا کہ جس سے طیارے کو باہر سے نشانہ بنانے کے دعوؤں کی تصدیق ہو سکے۔ بعض انتہا پسند تنظیمیں جہاز کو گرانے کا دعوی کر رہی ہیں۔