سوڈان کا مزید 1500 فوجی یمن بھیجے کا اعلان

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

سوڈان کے صدر محمد عمر البشیر نے یمن میں آئینی حکومت کی بحالی میں مدد فراہم کرنے کے لیے مزید ڈیڑھ ہزار تازہ دم فوجی یمن روانہ کرنے کا اعلان کیا ہے۔

یمن میں ایک سوڈانی سپاہی کے مارے جانے کے بعد "العربیہ" نیوز چینل سے گفتگو کرتے ہوئے صدر البشیر نے کہا کہ خرطوم یمن میں اپنے ڈیڑھ ہزار اہلکار جلد ہی روانہ کرنے کی تیاری کر رہا ہے۔

خیال رہے کہ دو روز قبل تعز شہر میں حوثی باغیوں کے ساتھ لڑائی میں سوڈان کا ایک فوجی اہلکار جاں بحق ہو گیا تھا۔ اس پر صدرعمر البشیر نے کہا کہ انہیں اپنے سپاہی کی موت پر کوئی دکھ نہیں۔ ان کا اصل مقصد یمن میں سعودی عرب کی قیادت میں جاری آپریشن کو منطقی انجام تک پہنچانا ہے۔ اس کے لیے جس طرح کی قربانی دینا پڑی اس سے دریغ نہیں کیا جائے گا۔

ایران سے تعلقات کے بارے میں بات کرتے ہوئے تہران کے سابق حلیف عمر البشیر کا کہنا تھا کہ ایران نے عرب ممالک میں کشیدگی کو ہوا دینے کی کوشش کی ہے۔ خرطوم نے اپنے ہاں ایران کی ثقافتی مداخلت پر پابندی عاید کرتی ہے تاہم دونوں ملکوں کے درمیان سفارتی تعلقات بدستور قائم ہیں۔

سوڈانی صدر کا العربیہ کو دیا گیا تفصیلی انٹرویو کل ہفتے کے روز سعودی عرب کے معیاری وقت کے مطابق شام پانچ بجے نشر کیا جائے گا۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں