.

تاشفین ملک نے داعش کی بیعت کر رکھی تھی: رپورٹ

ایف بی آئی: تحقیقات دہشت گردی کے پہلو کو مدنظر رکھتے ہوئے کی جا رہی ہیں

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

امریکی حکام کا کہنا ہے کہ رضوان فاروق کے ہمراہ ریاست کیلیفورنیا کے علاقے سان برنارڈینو میں ایک سوشل سینٹر پر حملہ حملہ کرنے والی خاتون تاشفین ملک نے فیس بک کے ایک دوسرے اکاؤنٹ کے ذریعے شدت پسند تنظیم دولتِ اسلامیہ کے رہنما سے وفاداری رہنما کی بیعت کر رکھی تھی ۔

دوسری جانب امریکی اخبار نیو یارک ٹائمز کا کہنا ہے کہ ایسے شواہد نہیں ملے ہیں کہ ان دونوں حملہ آوروں نے شدت پسند تنظیم دولتِ اسلامیہ کے کہنے پر حملہ کیا۔

'ایف بی آئی' کے ایک اعلیٰ افسر کے بقول تفتیش کار تاحال فائرنگ کے محرکات کا تعین نہیں کرسکے ہیں لیکن اب تحقیقات دہشت گردی کے پہلو کو مدِ نظر رکھتے ہوئے کی جارہی ہیں۔

امریکہ کے وفاقی تحقیقاتی ادارے 'ایف بی آئی' نے اعلان کیا ہے کہ ایجنسی کیلی فورنیا میں معذوروں کے ایک مرکز میں ہونے والی فائرنگ کی دہشت گردی کا واقعہ سمجھتے ہوئے تحقیقات کر رہی ہے۔

'ایف بی آئی' کے نائب سربراہ ڈیوڈ بوڈچ کا کہنا ہے کہ تفتیش کار تاحال فائرنگ کے محرکات کا تعین نہیں کرسکے ہیں لیکن اب تحقیقات دہشت گردی کے پہلو کو مدِ نظر رکھتے ہوئے کی جارہی ہیں۔

ڈیوڈ بوڈچ نے بتایا کہ تحقیقات کے دوران فائرنگ کرنے والے مشتبہ جوڑے اور بعض دیگر ملزمان کےدرمیان ٹیلی فونک رابطوں کا بھی انکشاف ہوا ہےجن کے خلاف بعض دوسرے الزامات کے تحت تحقیقات جاری تھیں۔

انہوں نے کہا کہ فائرنگ کے ملزم سیدرضوان فاروق اور ان کی پاکستانی اہلیہ تاشفین ملک کے خلاف اس سے قبل کوئی شکایت موصول نہیں ہوئی تھی اور نہ ہی ان کا نام شدت پسندی کا شکار افراد کی فہرست میں تھا۔

پولیس حکام کا کہنا ہے کہ بدھ کو کیلی فورنیا کے شہر سان برنارڈینو میں معذوروں کی بحالی کے ایک مرکز میں ہونے والی فائرنگ میں مذکورہ جوڑا ملوث تھا۔ فائرنگ میں 14 افراد ہلاک اور 21 زخمی ہوگئے تھے۔