.

کابل: ہوائی اڈے کے نزدیک خودکش کار بم دھماکا

خودکش بمبار کی غیرملکی فوج کے قافلے کو نشانہ بنانے کی کوشش ،ایک ہلاک

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

افغانستان کے دارالحکومت کابل کے نزدیک سوموار کو ایک خودکش کار بم دھماکے کے نتیجے میں ایک شخص ہلاک اور چار زخمی ہوگئے ہیں۔

افغان حکام کے مطابق خودکش بمبار نے اپنی بارود سے بھری کار سے غیرملکی فوج کے ایک قافلے کو نشانہ بنانے کی کوشش کی تھی۔کسی گروپ نے فوری طور پر اس حملے کی ذمے داری قبول نہیں کی ہے۔

کابل پولیس کے نائب سربراہ گل آغا روحانی نے صحافیوں سے گفتگو کرتے ہوئے اس بم دھماکے کی تصدیق کی ہے اور افغان وزارت داخلہ کے ترجمان صدق صدیقی نے ٹویٹر پر اس کے نتیجے میں ایک شخص کی ہلاکت اور چار کے زخمی ہونے کی اطلاع دی ہے۔

طالبان مزاحمت کاروں نے اس وقت افغان فورسز اور ان کے غیرملکی پشتی بانوں کے خلاف حملے تیز کررکھے ہیں اور انھوں نے جنوبی صوبے ہلمند کے ضلع سنگین کے ایک بڑے حصے پر بھی گذشتہ ہفتے کے دوران قبضہ کر لیا ہے۔بعض مبصرین کا کہنا ہے کہ طالبان جنگجو زیادہ سے زیادہ علاقے اپنے زیر قبضہ لانے کے لیے کوشاں ہیں تاکہ افغان حکومت کے ساتھ مذاکرات کی میز پر رعایتیں حاصل کی جاسکیں۔

یہ کار بم دھماکا پاکستان آرمی کے سربراہ جنرل راحیل شریف کے دورۂ کابل سے ایک روز بعد ہوا ہے۔انھوں نے افغان قیادت کے ساتھ طالبان مزاحمت کاروں سے امن مذاکرات کی بحالی کے سلسلے میں تبادلہ خیال کیا ہے۔واضح رہے کہ جولائی میں پاکستان کی میزبانی میں افغان حکومت اور طالبان کے نمائندوں کے درمیان مذاکرات ہوئے تھے مگر اس دوران ہی طالبان کے امیر ملّا محمد عمر کے انتقال کی خبر منظرعام پر آنے کے بعد یہ مذاکرات منقطع ہوگئے تھے۔