.

یمن: تعز کو آزاد کرانے کی تیاریاں زور شور سے جاری

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

#تعز شہر میں طبی ذرائع نے بتایا ہے کہ #حوثی مسلح عناصر اور معزول صدر #علی_صالح کی فوج کی جانب سے رہائشی علاقوں پر اندھا دھند بمباری کے نتیجے میں 5 شہری ہلاک اور 17 زخمی ہوگئے۔

دوسری جانب #عدن میں گزشتہ چند روز سے جاری اجلاسوں کے نتیجے میں شیخ حمود المخلافی کی قیادت میں ایک کونسل تشکیل دے دی گئی ہے، جس کا مقصد تعز کو حوثی باغی ملیشیاؤں سے آزاد کرانا ہے۔ اس کے علاوہ تین فوجی بریگیڈز میں تشکیل دیے گئے ہیں جن کی تربیت العند فضائی اڈے اور دیگر علاقوں میں جاری ہے۔ تربیت کی نگرانی عرب اتحادی افواج کے افسران کررہے ہیں۔

گزشتہ دو روز کے دوران عوامی مزاحمت کاروں نے مختلف محاذوں کی جانب پیش قدمی کی ہے۔ اس دوران حوثیوں کی جانب سے جبل ِ عروس کا کنٹرول واپس لینے کی کوشش بھی ناکام بنادی گئی۔ اس کے علاوہ تعز میں ثعبات اور الجحملیہ کے علاقوں میں زیادہ تر عمارتوں کو ملیشیاؤں کے نشانہ بازوں سے صاف کرالیا گیا ہے، جب کہ #یمن کی فوج نے شمال مغربی ساحل پر واقع میدی بندرگاہ کا کنٹرول سنبھال لیا ہے، جو یمن کے شمال مغرب میں باغیوں کے گڑھوں سے قریب ہے۔

ادھر اتحادی افواج کے طیاروں نے دارالحکومت #صنعاء میں مسلسل تیسرے روز فضائی حملوں کا سلسلہ جاری رکھا۔ اس دوران حوثی اور معزول صدر صالح کی ملیشیاؤں کے کیمپوں اور ٹھکانوں کے ساتھ ساتھ بیلسٹک میزائلوں کے لانچنگ پیڈز اور اسلحے کی منتقلی کے ٹرکوں کو بھی نشانہ بنایا گیا۔ باخبر ذرائع کے مطابق اس دوران اِب شہر میں باغیوں کے زیرِ کنٹرول الحمزہ کیمپ پر بھی بمباری کی گئی۔