.

فرانس: انتہا پسندی میں ملوث تین اسلامی تنظیموں پر پابندی عاید

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

فرانسیسی حکومت نے ملک میں انتہا پسندی میں ملوث تین اسلامی تنظیموں پر پابندی عاید کرتے ہوئے ان کے زیرانتظام چلنے والے اداروں اور مساجد کو بھی بند کر دیا ہے۔

العربیہ ڈاٹ نیٹ کے مطابق فرانسیسی وزیرداخلہ برنارکازنوف نے بدھ کو اپنے ایک بیان میں بتایا کہ حکومت نے انتہا پسندی میں ملوث تین اسلامی این جی اوز پر پابندی عاید کی ہے۔ ان میں سے ایک تنظیم کے زیراہتمام پیرس میں ایک مسجد بھی قائم کی گئی تھی جسے پچھلے سال نومبر میں ہونے والے دہشت گردانہ حملوں کےبعد بند کر دیا گیا تھا۔

مسٹر کازنوف نے کہا کہ جمہوریہ فرانس میں دہشت گردی،انتہا پسندی، مذہبی اشتعال انگیزی اور نفرت پھیلانے کی کوئی جگہ نہیں ہے۔

خیال رہے کہ فرانسیسی پولیس نے پچھلے سال دسمبر کے اوائل میں پیرس کے نواحی علاقے لانیی سورمارن کے مقام پر ایک مسجد کی تالا بندی کر دی تھی۔ یہ اقدام 13 نومبر کو پیرس میں ہونے والی دہشت گردی کے رد عمل میں کیا گیا تھا۔ تیرہ نومبر 2015ء کو فرانس میں دہشت گردی کے واقعات میں 130 افراد ہلاک ہو گئے تھےاور ان حملوں کی ذمہ داری ’’داعش‘‘ نے قبول کی تھی۔

ادھر فرانسیسی حکومت کے ترجمان اسٹیفن لوفول نے کابینہ کے اجلاس کے بعد میڈٰیا سے بات کرتے ہوئے کہا ہے کہ دہشت گردی اور انتہا پسندی کے خلاف ان کی جنگ پوری قوت سے جاری رہے گی۔ ان کا کہنا تھا کہ نفرت کے مبلغین کے خلاف جنگ کو مزید وسعت دی جائے گی۔

ترجمان نے کہا کہ حکومت نے جن اسلامی تنظیموں پر پابندی عاید کی ہے وہ کھلم کھلا انتہا پسندی کے فروغ اور پرچارک میں ملوث تھیں۔