.

سوشل میڈیا پر طلاق درست ہے: انڈیا مسلم بورڈ

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

آل انڈیا مسلم پرسنل لاء بورڈ نے قراردیاہے کہ اسکائپ ، واٹس ایپ ، فیس بک ، ای میل ، ایس ایم ایس ، ٹیلی فون کال اور دیگرسوشل میڈیا ایپس کے ذریعے دی گئی طلاق درست ہے اور اس سے علاحدگی ہوجاتی ہے۔

بورڈ نے سپریم کورٹ کے ان ریمارکس پر اظہار ناپسندیدگی کیا جن میں مسلم خواتین کے خلاف امتیازی سلوک کے خاتمے کیلئے اسلامی قوانین کے مطالعہ کی تجویز دی گئی تھی۔

بھارتی ٹی وی سے گفتگو کرتے ہوئے بورڈ کے سینئر رکن اور ترجمان محمد عبدالراہل قریشی نے کہاکہ عدالتی حکم قانونی طورپر مناسب نہیں کیونکہ مسلم لاء مذہب کا لازمی حصہ ہے۔ انہوں نے بتایاکہ ایک یا تین طلاقیں اکٹھی دینے میں کوئی فرق نہیں، ایک یا تین طلاقوں کی مدت کے بعد خاتون آزاد ہے، اس میں کوئی فرق نہیں تاہم اگر تین طلاقیں ایک ہی دفعہ دینے کے بعد مرد کو محسوس ہوتا ہے کہ اس نے غلطی سے انتہائی اقدام اٹھایاہے تو وہ عدت کی مدت کے دوران اپنی اہلیہ کو واپس لاسکتا ہے۔