.

"ایپل" کمپنی کا بائیکاٹ کیا جائے : ڈونلڈ ٹرمپ

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

امریکا میں صدارتی انتخابات کے ممکنہ ریپبلکن امیدواروں میں سبقت رکھنے والے ڈونلڈ ٹرمپ کا کہنا ہے کہ معروف انفارمیشن گروپ "ایپل" کا اس وقت تک بائیکاٹ کیا جانا چاہیے جب تک وہ دسمبر میں سان برنرڈینو کے ایک حملہ آور کے آئی فون کا کوڈ کھول نہیں دیتی۔

جنوبی کیرولائنا کے یولیز آئی لینڈ میں جہاں ریپبلکن پارٹی کے صدارتی امیدوار کا انتخاب کے سلسلے میں ہفتے کے روز ووٹنگ ہورہی ہے، ایک مجمعے سے خطاب کرتے ہوئے ٹرمپ کا کہنا تھا کہ "ایپل کمپنی پر لازم آتا ہے کہ وہ اس فون کا کوڈ کھولے"۔

انہوں نے کہا کہ " میں سمجھتا ہوں کہ آپ لوگوں کو ایپل کمپنی کا بائیکاٹ کرنا چاہیے جب تک کہ وہ اس پاس ورڈ کو ظاہر نہ کردے"۔

ڈونلڈ ٹرمپ نے واضح کیا کہ " یہ فون اس بدمعاش نوجوان کی ملکیت نہیں ہے جس نے ان تمام تر لوگوں کو ہلاک کیا، یہ تو حکام کی ملکیت ہے"۔

ایپل کمپنی نے منگل کے روز جاری ہونے والے اس امریکی عدالتی فیصلے کو ماننے سے انکار کردیا تھا جس میں امریکی ایف بی آئی سے مطالبہ کیا گیا تھا کہ وہ سان برنرڈینو کے ایک حملہ آور کے آئی فون کو ان لاک کرے۔ دسمبر میں کیلیفورنیا ریاست میں ہونے والے اس حملے میں 14 افراد اپنی جانوں سے ہاتھ دھو بیٹھے تھے۔

عدالت کی جج نے اپنے فیصلے میں ایپل کمپنی کو حکم دیا تھا کہ وہ ایف بی آئی کو "ہر ممکنہ تکینیکی معاونت فراہم کرے" تاکہ امریکی تحقیقاتی ادارے کو فون میں "محفوظ معلومات تک رسائی" حاصل ہوسکے۔

خاتون جج نے ایپل سے خصوصی طور پر مطالبہ کیا تھا کہ وہ اس فون کے لیے ایسا سافٹ ویئر پیش کرے جس کو استعمال کرکے تحقیق کار اس ڈیٹا کو پھر سے بحال کرلیں ... جو عام طور پر غلط پاس ورڈ کے استعمال کی متعدد کوششوں کے بعد خودکار طریقے سے حذف ہوجاتا ہے۔