.

روس اورامریکا آیندہ ہفتے سے شام میں جنگ بندی پر متفق

سعودی عرب کی حمایت یافتہ شامی حزب اختلاف نے جنگ بندی کی حمایت کردی

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

امریکا اور روس نے آیندہ ہفتے کے روز سے شام میں جنگ بندی سے اتفاق کیا ہے۔

امریکی عہدے داروں کے بہ قول دونوں ممالک شام میں جنگی کارروائیاں روکنے سے متعلق شرائط وضوابط پر متفق ہوگئے ہیں۔تاہم اس جنگ بندی کا داعش اور القاعدہ سے وابستہ جنگجو گروپ النصرۃ محاذ پر فضائی حملوں پر اطلاق نہیں ہوگا اور ان دونوں گروپوں کے خلاف شام میں فضائی حملے جاری رہیں گے۔

امریکی صدر براک براما اور روسی صدر ولادی میر پوتین کے درمیان ٹیلی فون پر گفتگو کے بعد شام میں اس جنگ بندی سے متعلق اعلان متوقع ہے۔

درایں اثناء سعودی عرب کے حمایت یافتہ شامی حزب اختلاف کے اتحاد کے سربراہ نے کہا ہے کہ باغی دھڑوں نے بین الاقوامی ثالثی کے نتیجے میں طے پانے والی اس جنگ بندی سے اصولی طور پر اتفاق کیا ہے۔

حزب اختلاف کی اعلیٰ مذاکراتی کمیٹی کے سربراہ ریاض حجاب نے ایک بیان میں روس ،ایران اور شامی حکومت سے مطالبہ کیا ہے کہ وہ شام میں اپنے حملے روک دیں ،شہروں اور قصبوں کی ناکا بندی ختم کریں اور قیدیوں کو رہا کردیں۔تاہم انھوں نے اپنے بیان میں جنگ بندی کی شرائط کا کوئی تذکرہ نہیں کیا ہے۔