.

جی سی سی اور پاکستان کی برسلز میں بم دھماکوں کی مذمت

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

چھے عرب ریاستوں پر مشتمل خلیج تعاون کونسل ( جی سی سی) نے بیلجیئم کے دارالحکومت برسلز میں تباہ کن بم دھماکوں کی مذمت کی ہے۔العربیہ نیوز چینل کی رپورٹ کے مطابق سعودی عرب نے اپنے شہریوں کو ہدایت کی ہے کہ وہ اپنے بیلجیئم کے سفر کو ملتوی کردیں۔

برسلز میں ہوائی اڈے اور یورپی یونین کے اداروں کے نزدیک واقع ایک میٹرو اسٹیشن پر بم دھماکوں میں اٹھائیس افراد ہلاک اور بیسیوں زخمی ہوگئے ہیں۔ان بم دھماکوں کے بعد بیلجیئم کے وزیر داخلہ نے ملک میں دہشت گردی کے خطرے کی سطح تین سے بڑھا کر چار کردی ہے۔برسلز میں تمام ٹرانسپورٹ نظام بند کردیا گیا ہے جس سے شہر میں کاروبار زندگی مفلوج ہوکر رہ گیا ہے۔

پاکستان کے صدر ممنون حسین اور وزیر اعظم میاں محمد نواز شریف نے بیلجیئن دارالحکومت میں دہشت گردی کے حملوں کی شدید الفاظ میں مذمت کی ہے اور ان میں قیمتی انسانی جانوں کے ضیاع پر گہرے دکھ اور افسوس کا اظہار کیا ہے۔

اسلام آباد میں جاری کردہ ایک مشترکہ بیان میں انھوں نے کہا ہے کہ دنیا کو دہشت گردی کے خلاف جنگ کے لیے اجتماعی کوششیں کرنا ہوں گی۔ان کا کہنا تھا کہ دنیا کا کوئی بھی دین کسی فرد کو اپنے جیسے انسانوں کو ہلاک کرنے کی اجازت نہیں دیتا ہے۔

شامی حزب اختلاف کی اعلیٰ مذاکراتی کمیٹی نے بھی برسلز میں بم دھماکوں کی مذمت کی ہے۔مصر کے دارالحکومت قاہرہ میں قائم تاریخی دانش گاہ جامعہ الازہر نے برسلز میں بم حملوں کو اسلام کی رواداری اور اعتدال پسندی پر مبنی تعلیمات کے منافی قرار دیا ہے۔جامعہ نے عالمی برادری پر زوردیا ہے کہ وہ دہشت گردی کی لعنت سے نمٹنے کے لیے اقدامات کرے۔