.

ترک طیاروں کی شمالی عراق میں کرد باغیوں کے ٹھکانوں پر بمباری

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

ترکی کے لڑاکا طیاروں نے شمالی عراق میں علاحدگی پسند کرد باغی گروپ کالعدم کردستان ورکز پارٹی (پی کے کے) کے اہداف پر بمباری کی ہے اور ان کے دس بارہ ٹھکانوں کو تباہ کردیا ہے۔

ترک فوج نے ایک بیان میں بتایا ہے کہ ایف 16 اور ایف 4 لڑاکا جیٹ نے ترکی کی سرحد کے نزدیک واقع عراق کے شمالی علاقوں حق کرک ،حفتنین ،اواسین اور باسیان میں مقامی وقت کے مطابق رات نو بجے بمباری کی تھی اور کردوں کے اسلحہ ڈپوؤں اور پناہ گاہوں سمیت گیارہ اہداف کو تباہ کردیا ہے۔

ترکی کے لڑاکا طیاروں نے منگل کے روز بھی شمالی عراق میں کرد جنگجوؤں کے ٹھکانوں اور ترکی کے جنوب مشرقی قصبے صمدنلی میں کردوں کے اہداف کو نشانہ بنایا تھا۔

سکیورٹی فورسز نے بدھ کے روز شام کی سرحد کے نزدیک واقع جنوب مشرقی قصبے نصیبین اور عراق کی سرحد کے نزدیک واقع قصبے سرناک میں جھڑپوں کے دوران پی کے کے کے دس جنگجوؤں کو ہلاک کردیا ہے۔

ترک فوج کا کہنا ہے کہ گذشتہ سال جولائی میں کردستان ورکرز پارٹی کے ساتھ جنگ بندی کے خاتمے کے بعد سے مختلف کارروائیوں میں ایک ہزار سے زیادہ کرد باغیوں کو ہلاک کردیا گیا ہے۔ترک صدر رجب طیب ایردوآن کے بہ قول اس عرصے کے دوران کرد باغیوں کے ساتھ جھڑپوں یا ان کے بم حملوں میں تین سو سے زیادہ سکیورٹی اہلکار ہلاک ہوئے ہیں۔

درایں اثناء ترک فوج نے ایک الگ بیان میں اطلاع دی ہے کہ نصیبین میں ایک ریموٹ کنٹرول بم دھماکے کے نتیجے میں دو فوجی ہلاک اور تین زخمی ہوگئے ہیں۔اس قصبے میں 14 مارچ سے کرفیو نافذ ہے اور سکیورٹی فورسز جنگجوؤں کے خلاف کارروائی کررہی ہیں۔