.

جماعت اسلامی مصرکے رہ نما شام میں فضائی حملے میں ہلاک

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

#مصر کی سخت گیر تنظیم #جماعت_اسلامی کے ایک سابق سربراہ رفاعی طہ شام کے شہر #ادلب میں ایک فضائی حملے میں مارے گئے ہیں۔

#قاہرہ میں جماعت اسلامی کے مرکزی رہ نما انجینیر عاصم عبدالماجد نے مفرور رہ نما رفاعی طہ کی شام میں فضائی حملے میں ہلاکت کی تصدیق کی ہے۔

خیال رہے کہ مقتول رہ نما 30 جون 2013ء کو مصر سے فرار ہوگئے تھے۔ جماعت اسلامی کے رہ نما عاصم عبدالماجد نے سماجی رابطے کی ویب سائیٹ ’فیس بک‘ پر پوسٹ کردہ ایک بیان میں کہا کہ رفاعی شام میں ایک فضائی حملے میں اس وقت مارے گئے ہیں جب ادلب میں ان کی کار کو ایک میزائل حملے کا نشانہ بنایا گیا تھا۔

مقتول رفاعی طہ کا شمار مصر میں جماعت اسلامی کے بانی ارکان میں ہوتا ہے۔ پانچ ستمبر سنہ 1981ء کو سابق صدر انور سادات نے جماعت اسلامی کے رہ نماؤں کی گرفتاری کےاحکامات جاری کیے تو ان میں طہ کا نام بھی شامل تھا۔ تاہم انہیں 16 اکتوبر کو انور سادات پر قاتلانہ حملے کے بعد گرفتار کیا گیا۔ ان پر ایک نئی جماعت بنانے کا بھی الزام عاید کیا گیا تھا۔ پانچ سال تک جیل میں رہنے کے بعد رفاعی طہ رہائی کے بعد یورپ اور مغربی ملکوں میں جماعت اسلامی کی حمایت کے حصول کے لیے مہم چلاتے رہے۔

سنہ 1997ء میں الاقصر کے مقام پرہونے والی خون ریزی میں انہیں ملوث قرار دیتے ہوئے سزائے موت کا حکم دیا گیا تاہم وہ 2011 کے انقلاب کے دوران جیل سے رہا ہوگئے اور اگست 2013ء کو ترکی کے راستے شام جا پہنچے تھے۔