.

تربیت یافتہ سعودی خاتون پائیلٹوں کو پرکشش ملازمتوں کی پیش کش

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

ترکش ائیرلائنز نے تربیت یافتہ اور طیارے اڑانے کی اہل سعودی خاتون پائیلٹوں کو پُرکشش ملازمتوں کی پیش کش ہے۔

ترکش ائیرلائنز کے جنرل مینجر تیمل کوتیل نے انقرہ میں ایک نیوز کانفرنس میں کہا ہے کہ اگر سعودی خاتون پائیلٹوں کو اپنے ملک کی فضائی کمپنیوں میں ملازمت نہیں ملتی ہے تو ان کی کمپنی انھیں بطور کپتان پائیلٹ بھرتی کرنے کو تیار ہے۔

انھوں نے کہا کہ اس وقت دنیا بھر میں پائیلٹوں کی تعداد کم ہے اور 2020ء تک یہ تعداد بڑھ کر قریبا ایک لاکھ ہوجائے گی۔ان کے بہ قول ہوابازی کے شعبے میں سعودی خواتین گریجوایٹس کے لیے مواقع موجود ہیں۔ نیوز کانفرنس میں ان کے ساتھ ترکی کے فروغ سرمایہ کاری کے ادارے کے مشیر اعلیٰ بھی موجود تھے۔

ترک کمپنی کے جنرل مینجر نے کہا کہ:''کچھ طیارے ایسے ہیں جن کو اڑانے کے لیے جسمانی مضبوطی کی ضرورت نہیں ہوتی اور انھیں اڑانے کے لیے خواتین پائیلٹس زیادہ بہتر رہیں گی''۔ان کا مزید کہنا تھا کہ ''ہم مسلم خواتین اور مرد پائیلٹوں کے تقرر کو ترجیح دیتے ہیں''۔