.

دہشت گردی کی لعنت کے خلاف سب کو لڑنا ہوگا: محمد بن سلمان

ایرانی نقل وحرکت کی نگرانی کے لیے مشترکہ پٹرولنگ فورس کے قیام کا فیصلہ

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

#سعودی_عرب میں گذشتہ روز #خلیج_تعاون_کونسل کے وزراء دفاع کے اجلاس کے دوران تمام خلیجی ریاستوں نے #دہشت_گردی اور انتہا پسندی کی لعنت سے مل کر لڑںے کے عزم کا اعادہ کیا ہے۔

العربیہ ڈاٹ نیٹ کے مطابق الدرعیہ شاہی محل میں ہونے والے خلیجی وزراء دفاع اجلاس سے خطاب کرتے ہوئے سعودی عرب کے نائب ولی عہد اور وزیر دفاع شہزادہ #محمد_بن_سلمان نے کہا کہ دہشت گردی کی لعنت سب کا مشترکہ چیلنج ہے اور اس کے خلاف سب کو مل کر لڑنا ہوگا۔

اجلاس کے دوران عرب ممالک میں جاری دہشت گردی، ایران کی خطے کو عدم استحکام سے دوچار کرنے کی سازشوں اور امریکا اور خلیجی ممالک کے درمیان تعلقات کے فروغ پر تفصیلی بات چیت کی گئی۔

اس موقع پر بات کرتے ہوئے شہزادہ محمد سلمان نے کہا کہ آج ہم مشترکہ چیلنجز سے نمٹنے کے لیے مشترکہ لائحہ عمل مرتکب کررہے ہیں۔ ہماری کوششیں سنجیدہ ہیں اور ہمیں ان تمام رکاوٹوں کو بھی ختم کرنا ہوگا جو دہشت گردی کی بیخ کنی کی راہ میں حائل ہو رہی ہیں۔

اجلاس کے بعد خلیج تعاون کونسل کے سیکرٹری جنرل ڈاکٹر عبدالطیف الزیانی نے کہا کہ انہوں نے امریکی وزیردفاع ایش کارٹر سے ملاقات میں داعش کے خلاف جنگ تیز کرنے اور خطے کی صورت حال پر تفصیلی بات چیت کی ہے۔ انہوں نے کہا کہ امریکی وزیر دفاع سے بات چیت کے دوران خلیجی وزراء دفاع نے عرب ممالک میں ایران کی مداخلت کا معاملہ بھی اٹھایا۔ انہوں نے کہا کہ امریکا اور خلیجی ممالک نے میزائل ڈیفنس سسٹم میں باہمی تعاون سے بھی اتفاق کیا ہے۔

اس کے علاوہ خلیجی ممالک نے فیصلہ کیا ہے کہ ایران کی جانب سے یمن میں باغیوں کو اسلحہ کی فراہمی کی روک تھام کے لیے سمندر میں مشترکہ پٹرولنگ سسٹم قائم کیا جائےگا۔

اس موقع پر امریکی وزیر دفاع آشٹن کارٹر نے کہا کہ دہشت گردی امریکا اور خلیجی ملکوں کا مشترکہ مسئلہ ہے۔ نیز امریکا خلیجی ممالک کی سلامتی کا پابند ہے۔

ان کا کہنا تھا کہ ایران کے متنازع جوہری پروگرام پر سمجھوتے کا مقصد خطے میں امن و استحکام کو فروغ دینا اور جوہری ہتھیاروں کےحصول کی دوڑ روکنا ہے۔ انہوں نے یقین دلایا کہ امریکا عرب ممالک میں ایران کی مداخلت روکنے کے لیے تمام ضروری اقدامات کرے گا۔