.

​برطانیہ: سعودی طالبہ کے قاتل کی وڈیو پہلی مرتبہ جاری!

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

برطانیہ کے شہر کولچسٹر کی پولیس نے اپنی ویب سائٹ پر "ایسکس یونی ورسٹی" میں پڑھنے والی سعودی طالبہ ناہد المانع کے قاتل کی وڈیو جاری کی ہے- کولچسٹر شہر میں اپنے بھائی کے ساتھ مقیم 31 سالہ ناہد (جو اسکالرشپ پر برطانیہ میں تعلیم حاصل کررہی تھی) کو 2014 میں چاقو کے وار کرکے ہلاک کردیا گیا تھا۔

قاتل کا نام جیمس فیئرویدر ہے اور اب اس کی عمر 17 برس ہوچکی ہے۔ وڈیو میں دیکھا جاسکتا ہے کہ وہ برطانوی شہری جيمس ایٹفیلڈ کے قتل کے بارے میں گفتگو کر رہا ہے جس کو فیئرویدر نے سعودی طالبہ کے قتل سے 3 ماہ قبل جنونی انداز میں چاقو کے 102 وار کرکے موت کے گھاٹ اتار دیا تھا۔

"العربيہ ڈاٹ نیٹ" کے مطابق 14 جون 2014ء کو سعودی طالبہ ناہد المانع کولچسٹر شہر میں اپنے گھر سے یونی ورسٹی کی جانب جا رہی تھی۔ ایک علاحدہ اور نسبتا سنسان راستے پر جیمس فیئرویدر نے اس پر حملہ کر دیا اور پے درپے سر، گردن اور بازوؤں پر چاقو کی 16 کاری ضربیں لگائیں جس کے نتیجے میں ناہد دم توڑگئی۔

تقریبا ایک سال قبل 26 مئی 2015ء کو فیئرویدر اسی مقام کے نزدیک سے گرفتار کرلیا گیا جہاں اس نے سعودی طالبہ کو ہلاک کیا تھا۔ فیئرویدر اپنے ہاتھوں میں دستانے پہن رہا تھا اور اس کے پاس آلہ جرم چاقو بھی تھا۔ بعد ازاں اس امر کی تصدیق ہوئی کہ سعودی طالبہ کے قتل سے 3 ماہ قبل فیئرویدر نے لندن سے 90 کلومیٹر کے فاصلے پر واقع کولچسٹر میں برطانوی شہری ایٹفیلڈ کو چاقو کے ذریعے انتہائی بھیانک انداز سے نشانہ بنایا تھا۔

قاتل کے کم عمر ہونے کی وجہ سے میڈیا میں اس کا نام یا تصویر نشر ہونے پر پابندی عائد رہی۔ یہاں تک کہ پولیس نے اس وڈیو کو خود جاری کیا جس میں فیئرویدر نمودار ہوا ہے۔ "العربیہ ڈاٹ نیٹ" نے یوٹیوب سے اس وڈیو کو لے کر پوسٹ کیا ہے۔ یاد رہے کہ ایسکس کے ایک ہسپتال میں زیرحراست "فیئرویدر" کے خلاف عدالتی کارروائی آئندہ جمعے کے روز فیصلے کے ساتھ اختتام پذیر ہوجائے گی۔