.

حوثی لیڈر کی صنعاء فوجی تنصیبات میں لوٹ مار

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

یمن سے ملنے والی اطلاعات میں انکشاف کیا گیا ہے کہ ایران نواز باغی گروپ حوثیوں کے لیڈر عبدالملک الحوثی اور ان کی قائم کردہ سپریم انقلابی کونسل نے دارالحکومت کی اہم تنصیبات میں لوٹ مار کا بازار گرم کر رکھا ہے۔

العربیہ ڈاٹ نیٹ کے مطابق حوثی لیڈر اور ان کے حواریوں نے صنعاء میں فوج کے’’فرسٹ بریگیڈ‘‘ کے ہیڈ کواٹر میں بڑے پیمانے پر لوٹ مار کی ہے۔

خبر رساں ایجنسی’’سبا‘‘ کےمطابق حوثی لیڈر عبدالملک حوثی کی قائم کردہ سپریم انقلابی کمیٹی کے چیئرمین محمد علی حوثی نے ایک کمیٹی تشکیل دی تھی جس کے ذمہ ’’پارک ستمبر21‘‘ پر قبضے کا کام تھا۔

خیال رہے کہ 10 اپریل سنہ 2013ء کو یمنی صدرعبد ربہ منصور ھادی نے فوج کے ڈھانچے کو نئے خطوط پر استوار کرنے کے لیے صنعاء کے آرمرڈ بریگیڈ کی تمام یونٹوں کوایک ہی بریگیڈ میں ضم کرنے کا حکم دیا تھا۔ صدارتی فیصلے کے مطابق صنعاء میں واقع ’’پارک 21 مارچ 2011ء‘‘ کو فرسٹ بریگیڈ کی ملکیت قرار دیا گیا تھا۔ اسی روز صدر نے جنرل علی محن الاحمر جو اس وقت نایب صدر کے عہدے پربھی کام کررہے ہیں کوصنعاء کےآرمی کور کا کمانڈر تعینات کیا گیا تھا۔

حوثی باغیوں نے 21 ستمبر 2014ء صنعاء کے بریگیڈ فرسٹ کے ہیڈ کواٹرپریلغار کرکے وہاں پر بڑے پیمانے پر لوٹ مار کی تھی اور کیمپ کو اپنی عسکری کارروائیوں کے مرکز میں تبدیل کردیا گیا تھا۔

واضح رہے کہ صنعاء میں واقع بریگیڈ فرسٹ کے زیراستعمال جگہ 22 لاکھ مربع میٹر ہے اور یہ دارالحکومت میں شمالا جنوبا پھیلی ہوئی ہے۔ باغیوں کی سپریم کونسل کے سربراہ محمد علی حوثی نے براہ راست عبدالملک حوثی کی ھدایت پر فوجی کیمپ کے لیے مختص جگہوں کو نہ صرف حوثیوں کے ناموں سے موسوم کرنے کی مہم شروع کی بلکہ یہ جگہ اونے پونے طویل مدت تک لیز پردے کراس سے حاصل ہونے والی رقم جنگ میں جھونک دی گئی تھی۔