.

خطے کو یکساں خطرناک سیکیورٹی چیلنجز کا سامنا ہے: ولی عہد

دہشت گرد مذہب اور انسانی تہذیب سے عاری ہیں

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

سعودی عرب کے ولی عہد شہزادہ محمد بن نایف بن عبدالعزیز نے کہا ہے کہ عرب خطے کو ایک جیسے خطرناک سیکیورٹی چیلنجز کا سامنا ہے۔ امن و امان کے چیلنجز سے نمٹنے کے لیے تمام خلیجی ممالک کو سیسہ پلائی دیوار بن کر لڑنا پڑے گا۔

العربیہ ٹی وی کے مطابق شہزادہ محمد بن نایف نے ریاض میں منعقدہ خیلج تعاون کونسل کے وزراء خارجہ کے مشاورتی اجلاس سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ خطے میں ایک ہی جیسے سییکیورٹی چیلنجز درپیش ہیں۔ امن وامان کو تباہ وبرباد کرنے والے جرائم پیشہ عناصر نہ صرف دین اسلام کی اعتدال پسندانہ تعلیمات پرحملے کررہے ہیں بلکہ قانون نافذ کرنے والے ادارے اور ان کے اہلکار بھی ان کا اہم ہدف ہیں۔ انہوں نے خبردار کیا کہ اگرعرب ممالک میں بدامنی پر قابو نہ پایا جاسکا تو اس کے نتیجے میں بڑی تباہی آئے گی۔

ولی عہد کا کہنا تھا کہ امن وامان کو یقینی بنانا ہماری سیاسی ذمہ داری نہیں بلکہ ہمارا دینی اور قومی فریضہ بھی ہے۔ بیشتر عرب ممالک اس وقت داخلی سطح پر بدامنی کی بدترین لہر کا سامنا کررہے ہیں۔ بدامنی کے ساتھ ساتھ اقتصادی اور سماجی ابتری بھی ان کے لیے ایک بڑا مسئلہ ہیں۔

انہوں نے سعودی عرب میں دہشت گردوں سے آہنی ہاتھوں سے نمٹنے کی شاہ سلمان عبدالعزیز کی پالیسی کو شاندار خراج تحسین پیش کیا۔ شہزادہ محمد بن نایف نے کہا کہ دہشت گردوں کا کوئی دین ومذہب اور تہذیب نہیں۔ اسلام کے نام پر دہشت گردی کرنے والے دین حنیف کے ماتھے پر بدنما دھبہ نہیں۔ ایسے فتنہ پرور لوگوں کو اپنے مذموم مقاصد میں کامیاب نہیں ہونے دیا جائے گا۔

خیال رہے کہ گذشتہ روز خلیج تعاون کونسل کے وزراء داخلہ کا مشاورتی اجلاس سعودی عرب کی میزبانی میں ہوا۔ اجلاس کے بعد جاری ہونے والے مشترکہ اعلامیے میں درج ذیل نکات پر اتفاق کیا گیا تھا۔

- عرب لیگ اور خلیج تعاون کونسل کی جانب سے دہشت گرد قرار دیے گئے داعش اور حزب اللہ جیسے گروپوں کے خلاف پوری قوت سے جنگ لڑی جائے گی۔

- خلیجی ممالک میں مشترکہ سیکیورٹی کے میدان میں باہمی تعاون بڑھایا جائے گا۔

- خلیجی خطے کو درپیش سیکیورٹی کےچیلنجز سے نمٹنے اور امن وامان کے قیام کے لیےکوششیں تیز کی جائیں گی۔

- دہشت گرد گروپوں کو مالی معاونت کرنے والے ذرائع ختم کیے جائیں گے۔

- دہشت گردی اور انتہا پسندی کے خلاف جاری عالمی جنگ میں بھرپور تعاون کیا جائے گا۔