حلب میں ہلاک ایرانیوں میں جنرل سلیمانی کا دست راست شامل

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

ایران کے بعض ذرائع ابلاغ نے انکشاف کیا ہے کہ حال ہی میں شام کے شمالی شہر حلب میں خان طومان کے مقام پر ہونے والی لڑائی میں مارے جانے والے ایرانیوں میں پاسداران انقلاب کی بیرون ملک سرگرم ایلیٹ فورس فیلق القدس کے سربراہ جنرل قاسم سلیمانی کا اہم ترین قریبی ساتھی شفیق شفیعی بھی شامل ہے۔

العربیہ ڈاٹ نیٹ نے ایرانی ذرائع ابلاغ کے حوالے سے اپنی رپورٹ میں بتایا ہے کہ مقتول ایرانی فوجی افسر شفیق شفیعی گذشتہ تین برس سے حلب میں جاری لڑائی میں شریک رہا ہے۔

میڈیا رپورٹس کے مطابق اسد رجیم شفیعی کی میت باغیوں سے لینے کی کوشش کررہی ہے مگر ابھی تک باغیوں نے اس کی میت شامی فوج کے حوالے نہیں کی ہے۔

خیال رہے کہ خان طومان قصبے پر شامی انقلابیوں نے گذشتہ جمعہ کو قبضہ کرلیا تھا۔ جنوب مغربی حلب کے دفاعی اعتبار سے اہم ترین علاقے خان طومان میں لڑائی میں ایرانی جنگجوؤں اور شامی فوج کو بھاری جانی نقصان اٹھانا پڑا تھا۔ ایران حلب میں ہلاکتوں پر سیخ پا ہے اور اس نے بدلہ لینے کی بھی دھمکی دی ہے۔

ایرانی پارلیمنٹ[مجلس شوریٰ] میں دفاعی کمیٹی کے چیئرمین اسماعیل کوثری نے ایک بیان کہا ہے کہ جیش الفتح نامی شامی باغی گروپ نے چھ ایرانی فوجیوں کو یرغمال بنا رکھا ہے۔ پارلیمنٹ میں ایک بیان میں اسماعیل کوثری نے بتایا کہ حلب میں حالیہ لڑائی کے دوران مزارات کی حفاظت پر مامور 13 ایرانی رضاکار ہلاک ، 18 زخمی اور پانچ یا چھ ایرانیوں کو یرغمال بنایا گیا ہے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں