.

حزب اللہ کی جانب سے قافلے پر اسرائیلی بمباری کی تردید

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

اسرائیلی میڈیا کے مطابق اسرائیلی فضائیہ نے منگل کے روز لبنانی اراضی میں عنجر کے علاقے میں حزب اللہ کے زیرانتظام ایک قافلے کو بمباری کا نشانہ بنایا۔ اسرائیلی چینل 2 نے بتایا ہے کہ کارروائی میں ریڈار اور طیارہ شکن نظام تباہ کر دیے گئے۔ حملے میں کسی کے ہلاک یا زخمی ہونے کی اطلاع نہیں ہے۔ اس دوران اسرائیل میں سرکاری حکام نے تفصیلات پر روشنی ڈالنے سے انکار کر دیا۔

لبنانی تنظیم حزب اللہ نے اس معاملے کی تردید کرتے ہوئے اسے بے بنیاد قرار دیا جب کہ لبنانی سیکورٹی ذرائع کا کہنا ہے کہ یہ فضائی حملہ شامی اراضی کے اندر کیا گیا۔

دوسری جانب لبنانی فوج نے بدھ کے روز ایک سرکاری بیان میں اعلان کیا ہے کہ صبح سویرے ایک اسرائیلی جاسوس طیارے نے عیترون قصبے کے اوپر لبنان کی فضائی حدود کی خلاف ورزی کی اور جنوبی علاقوں پر چکر لگا کر لبنانی حدود سے نکل گیا۔

اس کے علاوہ اسی نوعیت کے ایک دوسرے طیارے نے کفرکلا قصبے پر لبنانی فضائی حدود کی خلاف ورزی کی اور جنوبی علاقوں اور مغربی بقاع پر چکر لگاتا ہوا بدھ کو صبح سویرے حدود سے چلا گیا۔

لبنان کے اندر بمباری کی تصدیق کی صورت میں یہ طویل عرصے میں پہلی بار ہے کہ لبنانی اراضی کے اندر حزب اللہ کو بمباری کا ہدف بنایا گیا جب کہ شامی اراضی میں اسرائیل متعدد بار حزب اللہ کے قافلوں اور اس کے عناصر پر بمباری کر چکا ہے۔

یاد رہے کہ اسرائیلی وزیراعظم بنیامین نیتن یاہو نے اپریل میں حزب اللہ کے اسلحہ قافلوں کے خلاف اسرائیلی کارروائیوں کا ذکر کیا تھا اور کہا تھا کہ اسرائیل ہتھیاروں کی منتقلی کی ایسی کارروائی کو ناکام بنانے پر کام کر رہا ہے جس سے توازن بگڑ سکتا ہو۔