عراقی فورسز کی پیش قدمی، 15 دیہات داعش سے چھڑالیے

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

عراقی فوج نے شورش زدہ صوبہ الانبار میں تازہ کارروائیوں میں اہم پیش قدمی کرتے ہوئے دہشت گرد تنظیم دولت اسلامیہ ’’داعش‘‘ کے زیرقبضہ 15 دیہات چھڑا لیے۔

الجزیرہ آپریشنل کنٹرول روم کے سربراہ میجر جنرل علی دبعون نے ’’العربیہ‘‘ سے بات کرتے ہوئے بتایا کہ سیکیورٹی اداروں اور الانبار صوبے قبائلی لشکر نے 8 روز قبل مشترکہ آپریشن شروع کیا تھا۔ اس آپریشن میں داعش کے قبضے سے پندرہ دیہات کو چھڑا لیا گیا ہے۔ انہوں نے بتایا کہ آپریشن میں امریکا کی قیادت میں داعش کے خلاف سرگرم عالمی اتحاد کے جنگی طیاروں کی معاونت بھی حاصل رہی۔

میجرجنرل دبعون کا کہنا تھا کہ داعش سے آزاد کرائے گئے دیہات تزویراتی اہمیت کے حامل علاقوں کے درمیان واقع ہیں۔ یہ دیہات ایک طرف عین الاسد فوجی اڈے سے متصل ہیں اور دوسری جانب حدیثہ اور دریائے فرات کے دائیں کنارے پر پھیلے ہوئے ہیں۔ انہوں نے بتایا کہ داعش سے قبضے سے آزاد کرائے گئے دیہات میں الوردیہ، الربعی، عوینات، صوینج۔ ابو العلا،البرازیہ، جبہ اور دیگر شامل ہیں۔

قبل ازیں عراقی فوج نے الانبار میں الرطبہ شہرداعش سے چھڑانے کے لیے آپریشن شروع کیا تھا۔ آپریشنل چیف جنرل ھادی رزیج نے بتایا کہ الرطبہ شہر کو داعش سے آزاد کرالیا گیا ہے اور اب فورسز گھروں میں نصب کی گئی بارودی سرنگیں صاف کررہی ہیں۔

الرطبہ شہر کو داعش سے چھڑانے کے بعد بغداد کو عمان اور دمشق سے ملانے والی عالمی شاہراہ پر جگہ جگہ چیک پوسٹیں قائم کرکے تلاشی کا عمل زیادہ سخت کردیا ہے۔ یہ عالمی شاہراہ اردن کی سرحد کے قریب طرییبل گذرگاہ سے کچھ فاصلے پر الرطبہ شہر سے بھی ملتی ہے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں