.

مصری طیارے کی گہرے پانیوں میں آیندہ چند روز میں تلاش!

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

فرانس کے فضائی تحفظ کے ادارے بی ای اے نے کہا ہے کہ بحر متوسط میں مصر کے تباہ شدہ طیارے کے ملبے کی گہرے پانیوں میں تلاش کا کام آیندہ چند روز میں شروع کیا جائے گا۔

بی ای اے نے ایک بیان میں کہا ہے کہ فرانسیسی بحریہ کے نگران جہاز لاپلیس کے حادثے کی جگہ پر پہنچنے کے بعد گہرے پانیوں میں تباہ شدہ طیارے کے ملبے اور بلیک باکسز کی تلاش کا عمل شروع کیا جائے گا۔

طیارے کے بلیک باکسز کے بارے میں یقین کیا جاتا ہے کہ وہ تین ہزار میٹر کی گہرائی میں سمندر کی تہ میں پڑے ہیں۔میری ٹائم ماہرین کا کہنا ہے کہ آواز والے ہائیڈرو فونز کا پانی میں دو ہزار میٹر کی گہرائی سے پتا چلنا چاہیے اور اس صورت ہی میں وہ سگنل پکڑ سکتے ہیں اور بلیک باکسز کا سراغ مل سکے گا۔

فرانسیسی ایجنسی کی جانب سے اس بیان سے ایک روز قبل ہی یونان نے 19 مئی کو علی الصباح سمندر میں گر کر تباہ ہونے والے مصر کے مسافر طیارے کی آخری آڈیو ریکارڈنگز قاہرہ میں تحقیقاتی ٹیم کو بھیجی ہیں۔اس میں پائیلٹ کی آوازیں اور آخری پیغام رسانی ہے۔یونان نے اس کے علاوہ طیارے کی راڈار تصویر بھی بھیجی ہے۔