.

برازیلی پولیس کو گینگ ریپ کے 30 ملزموں کی تلاش

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

برازیل کے شہر ریوڈی جنیرو کے دو نواحی علاقوں میں پولیس ایک سولہ سالہ لڑکی کی اجتماعی عصمت ریزی کے واقعے میں ملوّث ملزموں کی تلاش میں ہے۔پولیس کے ستر سے زیادہ افسروں نے کتوں، ہیلی کاپٹروں اور بکتربند گاڑیوں کے ذریعے ریوڈی جنیرو کے نواح میں واقع دو بستیوں میں کارروائی کی ہے لیکن انھیں مشتبہ ملزموں کو پکڑنے میں کوئی خاطر خواہ کامیابی نہیں ملی ہے۔

اس برازیلی دوشیزہ کا کہنا ہے کہ اس کے ساتھ کم سے کم تیس افراد نے منہ کالا کیا ہے۔اس واقعے کا ایک مبینہ ملزم کی جانب سے ٹویٹر پر ایک ویڈیو پوسٹ کیے جانے کے بعد پتا چلا تھا۔پولیس نے پانچ افراد کو پوچھ تاچھ کے لیے حراست میں لیا ہے لیکن کسی کو باضابطہ طور پر گرفتار نہیں کیا ہے۔

پولیس کا کہنا ہے کہ ایسے اشارے ملے ہیں جن سے یہ پتا چلتا ہے کہ یہ واقعہ 21 مئی کو پیش آیا تھا لیکن اس نے اس بات کی تصدیق نہیں کی کہ اس میں کل کتنے افراد ملوّث ہیں۔

اخلاق باختگی کے اس واقعے کے خلاف برازیلی شہریوں نے سخت غیظ وغضب کا اظہار کیا ہے۔اختتام ہفتہ پر ملک کے مختلف شہروں میں خواتین اور مردوں نے احتجاجی مظاہرے کیے تھے اور عورتوں کے خلاف جنسی تشدد کے بڑھتے ہوئے واقعات کی مذمت کی تھی۔

متاثرہ لڑکی نے ایک مقامی اخبار سے انٹرویو میں حکام سے انصاف دلانے کا مطالبہ کیا ہے تاکہ اس جیسی کسی اور لڑکی کے ساتھ اس طرح کا کوئی گھناؤنا واقعہ رونما نہ ہو۔اس نے کہا:''آج میں خود کو کچرے کا ایک ٹکڑا محسوس کرتی ہوں اور میں توقع کرتی ہوں کہ کوئی اور فرد ایسا محسوس نہیں کرے گا''۔

اس واقعے کے بعد سے ریوڈی جنیرو میں سکیورٹی اور برازیل میں سیاسی تعطل کے حوالے سے تشویش کا اظہار کیا جارہا ہے جہاں پانچ اگست کو اولمپک کھیلوں کے مقابلے شروع ہورہے ہیں۔براعظم جنوبی امریکا کے کسی ملک میں یہ پہلے اولمپکس ہیں۔

واضح رہے کہ برازیل میں حالیہ مہینوں کے دوران جرائم کی شرح میں کمی واقع ہوئی ہے۔البتہ حالیہ مہینوں میں قتل کی وارداتیں بڑھ گئی ہیں جبکہ ریوڈی جنیرو پولیس نے ملک میں جاری اقتصادی بحران کے پیش نظر اپنے بجٹ میں کٹوتی کردی تھی۔

برازیل کی پہلی منتخب خاتون صدر ڈیلما روسیف کو مواخذے کی کارروائی کا سامنا ہے اور وہ اس وقت معطل ہیں۔ان پر الزام عاید کیا گیا تھا کہ انھوں نے بجٹ قوانین کی خلاف ورزی کی تھی۔ان کے خلاف مواخذے کی کارروائی اس وقت ہوگی جب ملک میں اولمپک کھیلوں کے مقابلے بھی شروع ہوچکے ہوں گے۔

برازیل کو 1930ء کے عشرے کے بعد بدترین اقتصادی بحران کا سامنا ہے اور اسی سے سیاسی بحران نے جنم لیا ہے۔اس کے علاوہ ملک میں زکا وائرس بھی پھیلا ہوا ہے اور اس کی وجہ سے ماہرین اولمپک کھیلوں کو ملتوی کرنے یا کسی اور جگہ منتقل کرنے کا مطالبہ کرچکے ہیں۔