.

’مصر اور خلیجی ملکوں کو باہم لڑانے کی سازشیں ہو رہی ہیں‘

ریاض، قاہرہ کے دشمن جزیروں پر سیاست کررہے ہیں: السیسی

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

مصر کے صدر عبدالفتاح السیسی نے اپنے ایک انٹرویو میں کہا ہے کہ بعض سازشی قوتیں مصر اور خلیجی ممالک کے درمیان تناؤ اور تنازعات پیدا کرنے کی کوششیں کررہی ہیں۔ ان کا کہنا تھا کہ دو سمندری جزیروں کی سعودی عرب کو حوالگی پر سیخ پا عناصر مصر اور سعودی عرب کے درمیان تعلقات بگاڑنے کی سازشوں میں مصروف عمل ہیں مگر ہم ان کی تمام سازشوں کو ناکام بنائیں گے۔

اقتدار سنبھالنے کے دو سال مکمل ہونے کے موقع پر ایک ٹی وی انٹرویو میں مصری صدر نے کہا کہ ان کی حکومت یونان کے ساتھ سمندری حدود کی حد بندی کی کوشش کررہی ہے کیونکہ جب تک سمندری حدود کا تعین نہیں ہوجاتا اس وقت تک بحیرہ روم اور بحر احمر میں موجود اقتصادی ذخائر و معدنیات کے حصول کا کوئی راستہ نہیں ہے۔

ایک سوال کے جواب میں مصری صدر عبدالفتاح السیسی کا کہنا تھا کہ سازشی قوتیں مصر کی سرحدوں کے تعین کی کوششوں کو بھی عوامی رائے عامہ کو گمراہ کرنے میں مصروف ہیں اور ایسی تمام قوتیں مصر اور پڑوسی ملکوں کے درمیان تعلقات بگاڑنا چاہتی ہیں۔

امریکا اور مصر کے تعلقات کے بارے میں ایک سوال کے جواب میں صدر السیسی کا کہنا تھا کہ قاہرہ اور واشنگٹن کے درمیان گہرے تزویرات تعلقات موجود ہیں۔ ان کا کہنا تھا کہ مجھے سمجھ نہیں آتا کہ لوگ یہ کیسے کہہ دیتے ہیں کہ امریکا اور مصر کے درمیان تعلقات مطلوبہ معیار پرنہیں ہیں۔ ہمارے لیے ماضی کی حکومتوں کی پالیسیاں عملی نمونہ نہیں ہیں۔ حالیہ چند برسوں کے درمیان مصر اور امریکا کے درمیان دوطرفہ تعلقات میں بہتری آئی ہے۔

ایک سوال کے جواب میں السیسی نے کہا کہ مصر سمیت خطے کے تمام ممالک مسئلہ فلسطین کے منصفانہ اور دیر پا حل کے حامی ہیں تاکہ نہ صرف خطے میں قائم قائم ہو بلکہ آزاد فلسطینی ریاست کی بنیاد رکھی جاسکے۔ق