.

ہتھیاروں تک بآسان رسائی بالکل غیراصولی ہے: اوباما

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

امریکی صدر براک اوباما نے ایک مرتبہ پھر بندوق کے ذریعے ہونے والے تشدد کے خاتمے پر زوردیا ہے اور ہتھیاروں تک آسان رسائی کو بالکل ''غیر اصولی'' قراردیا ہے۔

صدر اوباما نے اورلینڈو میں گذشتہ اتوار کو فائرنگ کے واقعے میں ہلاک ہونے والے افراد کے لواحقین سے جمعرات کو ملاقات کی ہے۔اس کے بعد اپنے ہفت وار خطاب میں کہا ہے کہ ''بچوں کے غم زدہ والدین سے ملاقات کے بعد حقیقت یہ ہے کہ ہم نے بطور امریکا آیندہ دل کو توڑنے والے ایسی احمقانہ کارروائیوں کو روکنے کے لیے کچھ نہیں کیا ہے''۔

انھوں نے اپنی تقریر میں اورلینڈو میں انچاس افراد کے اندوہناک قتل عام کے علاوہ گذشتہ سال دسمبر میں سان برنارڈینو، کیلی فورنیا میں ایک جوڑے کی کرسمس کی پارٹی پر فائرنگ کا حوالہ بھی دیا ہے جس میں چودہ افراد ہلاک ہوگئے تھے۔انھوں نے کہا کہ ایسے واقعات کے بعد ملک میں پیدا شدہ دہشت گردی کو کنٹرول کرنے کے لیے اقدامات کیے جارہے ہیں مگر اس کے باوجود حملہ آوروں کو آتشیں رائفلیں دستیاب ہیں۔

انھوں نے کہا کہ تمام والدین کی طرح مجھے بھی اپنی بیٹیوں کے تحفظ کے حوالے سے ہر وقت دھچکا لگا رہتا ہے۔خاص طور پر ان جگہوں پرجہاں ہمارے بیٹے اور بیٹیاں روزانہ جاتے ہیں اور ان کے اسکولوں ،عبادت کی جگہوں،فلم تھیٹروں اور نائٹ کلبوں میں اس تشدد کو روکا بھی جاسکتا ہے۔

صدر اوباما کا کہنا تھا کہ یہ بالکل بے اصولی بات ہے کہ ہم نے ان جگہوں پر جنگ کے ہتھیاروں کو بآسانی لے جانے کی اجازت دے رکھی ہے۔انھوں نے کہا کہ ہمیں ہمارے بچوں کو یہ بتانے کی ضرورت ہے کہ بندوقوں کے ہماری کمیونٹیوں کے لیے کیا خطرات ہوسکتے ہیں۔انھوں نے اورلینڈو کے دورے کے بعد حزب اختلاف ری پبلکن پارٹی کی بالادستی کی حامل کانگریس سے ہتھیاروں کے کنٹرول کا قانون منظور کرنے کی ضرورت پر زوردیا تھا۔