.

سعودی نائب ولی عہد آیندہ ہفتے فرانس جائیں گے

صدر فرانسو اولاند سے دوطرفہ تعلقات کے فروغ اور علاقائی امور پر بات چیت کریں گے

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

سعودی عرب کے نائب ولی عہد اور وزیردفاع شہزادہ محمد بن سلمان آیندہ ہفتے فرانس کے سرکاری دورے پر پیرس جائیں گے جہاں وہ فرانسیسی قیادت سے دونوں ملکوں کے درمیان دوطرفہ تعاون کے فروغ سے متعلق امور اور علاقائی تنازعات پر تبادلہ خیال کریں گے۔

الریاض میں فرانسیسی سفارت خانے نے جمعرات کو جاری کردہ ایک بیان میں بتایا ہے کہ شہزادہ محمد آیندہ سوموار کو پیرس میں صدر فرانسو اولاند سے بات چیت کریں گے۔منگل کو وہ فرانسیسی وزیر خارجہ ژاں مارک آیرو کے ساتھ سعودی فرانس مشترکہ کمیٹی کے اجلاس کی میزبانی کریں گے۔

شہزادہ محمد بن سلمان جون کے وسط سے امریکا کے سرکاری دورے پر ہیں جہاں انھوں نے امریکی صدر براک اوباما ،وزیر دفاع آشٹن کارٹر ،وزیر خارجہ جان کیری اور دوسرے اعلیٰ عہدے داروں کے ساتھ دونوں ملکوں کے درمیان دوطرفہ تعلقات کے فروغ ،یمن اور شام میں جاری بحرانوں سمیت مشرق وسطیٰ کے خطے کی مجموعی صورت حال پر تفصیلی تبادلہ خیال کیا ہے۔انھوں نے اقوام متحدہ کے سیکریٹری جنرل بین کی مون سے بھی ملاقات کی ہے۔

واضح رہے کہ صدر فرانسو اولاند کے دور حکومت میں سعودی عرب اور فرانس کے درمیان دوطرفہ تعلقات کو فروغ حاصل ہوا ہے اور سعودی عرب خطے میں اپنے روایتی حریف ایران کا مقابلہ کرنے کے لیے اپنے دیرینہ حلیف ملک امریکا کے بجائے اب دوسری بڑی طاقتوں کے ساتھ تعلقات کے فروغ کے لیے کوشاں ہے اور ان کے ساتھ نئے اتحاد بنا رہا ہے۔

شہزادہ محمد نے گذشتہ سال جون میں فرانس کا پہلا دورہ کیا تھا اور سعودی فرانس مشترکہ کمیٹی کا افتتاح کیا تھا۔اس سے پہلے فرانسیسی صدر فرانسو اولاند نے الریاض کا دورہ کیا تھا اور سعودی فرمانروا شاہ سلمان بن عبدالعزیز سے ملاقات کے علاوہ خلیج تعاون کونسل کے سربراہ اجلاس میں شرکت کی تھی اور دوسرے خلیجی لیڈروں سے باہمی تعلقات اور شام کی صورت حال پر بات چیت کی تھی۔

مذکورہ مشترکہ کمیٹی کے ذریعے دونوں ممالک دفاع ،توانائی ،صحت ،زراعت اور کھیلوں سمیت مختلف شعبوں میں دوطرفہ تعلقات کے فروغ کے خواہاں ہیں۔فرانسیسی سفارت خانے کے بیان کے مطابق سعودی نائب ولی عہد فرانسیسی وزیراعظم مینول والس سمیت سرکردہ سیاست دانوں سے بات چیت میں سعودی عرب کے ویژن 2030ء اور قومی تبدیلی کے پانچ سالہ پروگرام کے فریم ورک کے تحت دوطرفہ تعاون کے نئے امکانات کا جائزہ لیں گے۔وہ علاقائی امور پر بھی تبادلہ خیال کریں گے۔

واضح رہے کہ فرانسیسی وزیراعظم مینول والس نے گذشتہ سال اکتوبر میں سعودی عرب کے دورے کے موقع پر مختلف شعبوں میں دس ارب یورو (گیارہ ارب ڈالرز) کے معاہدوں اور سمجھوتوں کا اعلان کیا تھا۔تاہم ان میں سے بعض کو ابھی تک حتمی شکل نہیں دی جاسکی ہے۔فرانس سعودی عرب میں غیرملکی سرمایہ کاری کرنے والا تیسرا بڑا ملک ہے۔