.

استنبول ائیرپورٹ پر حملے میں 6 سعودی جاں بحق ،27 زخمی

خودکش بم دھماکوں میں ایک ایرانی اور ایک یوکرینی شہری کی ہلاکت کی تصدیق

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

ترکی میں متعیّن سعودی سفیر عادل مرداد نے کہا ہے کہ منگل کی شب استنبول کے اتاترک بین الاقوامی ہوائے اڈے پر خودکش بم حملوں میں چھے سعودی شہری جاں بحق اور ستائیس زخمی ہوگئے ہیں اور پانچ ابھی تک لاپتا خیال کیے جارہے ہیں۔

ترکی کے سب سے مصروف ہوائی اڈے پر تین خودکش بمباروں نے حملہ کیا تھا۔انھوں نے پہلے ہوائی اڈے پر موجود مسافروں پر خودکاروں رائفلوں سے فائرنگ کی تھی اور اس کے بعد خود کو دھماکوں سے اڑا دیا تھا۔

ترک وزیراعظم بن علی یلدرم نے بدھ کو بتایا ہے کہ دہشت گردی کے اس حملے میں اکتالیس افراد جاں بحق اور دو سو انتالیس زخمی ہوئے ہیں۔ان کا کہنا تھا کہ ابتدائی اشاروں سے لگتا ہے کہ عراق اور شام میں برسر پیکار داعش کا استنبول کے ہوائی اڈے پر خودکش بم حملوں میں ہاتھ ہے۔

سعودی سفیر نے العربیہ ڈاٹ نیٹ کو بتایا ہے کہ جاں بحق سعودیوں میں چار خواتین اور دو مرد ہیں۔ان میں چار افراد ایک ہی خاندان سے تعلق رکھتے تھے۔تاہم انھوں نے ان کے احترام اورسوگوار خاندانوں کو مطلع کرنے سے قبل ان کی مزید شناخت ظاہر نہیں کی ہے۔

انھوں نے مزید کہا کہ پانچ دوسرے سعودیوں کی بم دھماکوں میں ہلاکت سے متعلق ہنوز کوئی شہادت نہیں ملی ہے،اس لیے انھیں فی الوقت ''لاپتا'' قرار دیا گیا ہے۔انھوں نے زخمیوں کی جلد صحت یابی کی دعا کی ہے اور کہا ہے کہ سعودی عرب بے گناہ انسانی زندگیوں کو نشانہ بنانے کی شدید مذمت کرتا ہے۔

درایں اثناء ایک ترک عہدے دار نے بتایا ہے کہ استنبول کے بین الاقوامی ہوائی اڈے پر خودکش بم حملے میں ایک ایرانی اور ایک یوکرینی کی ہلاکت کی بھی تصدیق ہوگئی ہے۔

ایران کی تسنیم نیوز ایجنسی نے نائب وزیر خارجہ حسن قشقاوی کے حوالے سے بتایا ہے کہ دہشت گردی کے اس حملے میں پانچ ایرانی شہری زخمی بھی ہوئے ہیں۔یوکرین کی وزارت خارجہ نے ایک یوکرینی خاتون کی ہلاکت اور ایک شہری کے زخمی ہونے کی تصدیق کی ہے۔